گاڑیوں کی روز بڑھتی قیمتیں، حکومت گاڑیوں کی قیمتوں کا تعین کرنے کیلئے متحرک

کار کمپنیوں کیلئے قیمتوں میں کمی کے لیے ٹیکس میں کمی کی گئی،اس کے باوجود کمپنیاں ایک بار پھر قیمتوں میں اضافے کیلئے پر تول رہی ہے،جس پر حکومت نے ایکشن لے لیا، اور اب حکومت گاڑیوں کی قیمتیں طے کرنے پر غور کررہی ہے،حکومت نے پہلے ہی ایک آٹو کمپنی کو قیمتوں میں اضافہ واپس لینے اور تمام کمپنیوں کے لیے گاڑیوں کی قیمتیں طے کرنے کا حکم دے دیا ہے۔

وزارت صنعت و پیداوار نے انجینئرنگ ڈویلپمنٹ بورڈ کو خط لکھا،خط کے ذریعے کمپنیوں سے قیمتوں میں اضافے کی وجوہات طلب کرلیں،وزارت کی جانب سے کہا گیا کہ حکومت نے ڈیوٹی اور ٹیکس میں کمی کی تاکہ عوام سستی کاریں خرید سکیں اور کمپنیوں کی فروخت میں بھی اضافہ ہو۔

خط میں کہا گیا کہ حکومت کا آٹوموبائل مینوفیکچررز کو ٹیکسوں میں نمایاں رعایت دینے کا مقصد عوام کی پہنچ تک سستی کاریں لانا تھا،کار ساز کمپنیوں نے ان رعایتوں کے بعد اپنی قیمتیں کم بھی کیں، لیکن اب قیمتیں بڑھائے جانے کا امکان ہے،یہ صورتحال واضح طور پر ناقابل قبول ہے ،حکومت کے پاس ریگولیٹری اقدامات شروع کرنے کے سوا کوئی راستہ نہیں،جس میں پرائس کنٹرول اور منافع خوری اور ذخیرہ اندوزی کی روک تھام ایکٹ 1977 کے تحت قیمتوں کا تعین ہوگا۔

خط میں ہدایت کی گئی کمپنیاں آٹوموبائل مینوفیکچررز کو ہدایت کریں کہ وہ اپنے اخراجات کی تفصیلات فراہم کریں،انجینئرنگ ڈویلپمنٹ بورڈ کے جنرل منیجرعاصم ایاز نے کہا کہ وزارت صنعت و پیداوار نے کار کمپنیوں سے گاڑیوں کی تیاریوں میں لاگت کا ڈھانچہ شیئر کرنے اور قیمت میں اضافے کا جواز پیش کرنے کی ہدایت کی ہے۔

وزرات صنعت کے ذرائع کا دعویٰ ہے کہ آٹوموٹو انڈسٹری کے لیےاہم خام مال کی ترسیل کی لاگت اور قیمتیں بڑھ گئی ہیں،چانگان پاکستان میں سیلز اینڈ مارکیٹنگ کے ڈائریکٹر نے کہا کہ اسٹیل کی قیمتیں بڑھتی ہیں تو کاروں کی قیمتیں بھی بڑھ جائیں گی،ریسرچ تجزیہ کار وقاص غنی نے بتایا کہ اسٹیل کی قیمتیں آئندہ چند ماہ تک موجودہ سطح پر برقرار رہ سکتی ہیں،آٹو سیکٹر کے تجزیہ کار ارسلان حنیف کا کہنا ہے کہ زیادہ کاریں فروخت کرنے کے باوجود کمپنی کا منافع توقعات سے کم رہا ہے۔

حکومت نے تمام گاڑیوں پر فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی ایک ہزار سی سی سے اوپر کی 2.5 فیصد کم کر دی۔ 1000cc سے کم گاڑیوں پر سیلز ٹیکس 17 فیصد سے کم کرکے 12.5 فیصد کردیا گیا ہے،1000cc سے کم کاروں پر 7 فیصد اضافی کسٹم ڈیوٹی ہٹا دی گئی اور 1000cc سے اوپر والی گاڑیوں پر 2 فیصد کر دی گئی ہے۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >