پی ٹی آئی کی ٹیکس ایمنسٹی سکیم ن لیگ کی تین سکیمز سے زیادہ کامیاب

Tax Amnesty
پی ٹی آئی کی ٹیکس ایمنسٹی سکیم نون لیگ کی تین سکیمز سے زیادہ کامیاب رہی

مسلم لیگ نون کے دور اقتدار میں متعارف کرائی گئی تین سکیموں سے نوے ہزار لوگوں نے فائدہ اٹھایا جبکہ پی ٹی آئی کی ایک ہی سکیم سے ایک لاکھ چوبیس ہزار افراد نے فائدہ اٹھایا

تفصیلات کے مطابق اسلام آباد مسلم لیگ (ن) کے دور حکومت میں ٹیکس نیٹ بڑھانے کیلئے 3 ایمنسٹی سکیمیں متعارف کرائی گئیں مگر موجودہ حکومت کی ایک سکیم مسلم لیگ (ن) کے دور کی تینوں سکیموں سے زیادہ کامیاب رہی ۔

ذرائع کو دستیاب دستاویزات کے مطابق مسلم لیگ (ن) کے دور میں3 سکیمیں متعارف کرائی گئیں مگر وہ کامیاب نہ ہو سکیں۔ مسلم لیگ (ن ) نے اپنے لوگوںکو نوازنے کیلئے اپنی حکومت کے آخری سال2سکیمیں متعارف کرائیں۔

2015 میں پہلی سکیم متعارف کرائی گئی جس کو ریٹرن آف انکم انڈر نائنتھ شیڈول پار ٹ ون کا نام دیا گیا جس سے صرف 7575افراد نے استفادہ کیا۔ دوسری سکیم 2018 ء میں غیر ملکی اثاثے ایکٹ کے نام سے متعارف کرائی گئی جو پہلی کے مقابلے میں بھی ناکام رہی اور 6197افراد نے استفادہ کیا۔

مسلم لیگ(ن) کی حکومت کی جانب سے تیسری سکیم 2018ئمیں متعارف کرائی گئی جس سے 76ہزار 958افراد نے استفادہ کیا۔ اس طرح ن لیگی سکیموں سے کل 90ہزار 730افراد نے استفادہ کیا ۔

تحریک انصاف کی حکومت نے 2019 ء میں اثاثے ظاہر کرنے کا آرڈیننس متعارف کرایا جو مسلم لیگ (ن) کی تینوں سکیموں سے زیادہ کامیاب رہااورتحریک انصاف کی ایک ہی ایمنسٹی سکیم سے ایک لاکھ 24ہزار 587افراد نے استفادہ کیا۔


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>