سپریم کورٹ نے جی آئی ڈی سی کیس کا محفوظ فیصلہ سنادیا

سپریم کورٹ نے گیس انفرااسٹرکچر ڈویلپمنٹ سیس کیس کا محفوظ فیصلہ سناتے ہوئے کمپنیوں کی اپیلیں مسترد کر دی ہیں۔

سپریم کورٹ کے جسٹس مشیر عالم نے فیصلہ پڑھ کر سنایا جس میں کہا گیا ہے کہ ‏کمپنیوں کو 417 ارب روپے ادا کرنا ہوں گے۔

سپریم کورٹ کے 3 رکنی بنچ نے دو ایک کی اکثریت سے فیصلہ سنایا، فیصلے کے مطابق کمپنیز کو جی آئی ڈی سی ٹیکس ادا کرنا ہو گا۔

سپریم کورٹ کے فیصلے کے تحت کمپنیزکوگیس انفراسٹرکچرڈویلپمنٹ سیس کی مدمیں417ارب روپےاداکرنےہونگے۔ 60 کمپنیوں نے کمپنیزکوگیس انفراسٹرکچرڈویلپمنٹ سیس صارفین سے وصول کرلیا تھا لیکن حکومت کو ادائیگیاں نہیں کی جارہی تھیں۔

اس کیس میں پہلےہائیکورٹ نےحکومت کے حق میں فیصلہ دیا تھا۔ اٹارنی جنرل نے حکومت کی جانب سے سپریم کورٹ میں اپیل کی تھی کہ جو درخواستیں التوا کا شکار ہیں ان پر جلد فیصلہ کیا جائے کیوں کہ حکومت کو بھاری مالی خسارہ ہورہا ہے۔ اس پر سپریم کورٹ نے جسٹس مشیرعالم کی سربراہی میں تین رکنی بنچ تشکیل دیا تھا جن پر طویل سماعتیں ہوئی تھیں۔

یاد رہے کہ ‏سابق حکومت نے گیس پائپ لائن منصوبوں کیلئے سیس کے نام سے ایک ٹیکس لاگو کیا تھا، موجودہ ‏حکومت نے آرڈیننس کے ذریعے جی آئی ڈی سی کے 220 ارب روپے معاف کر دیے تھے۔

میڈیا اور اپوزیشن کی شدید تنقید کے بعد حکومت نے آرڈیننس واپس لے لیا تھا اور حکومت اس معاملہ کو عدالت لے گئی تھی۔

  • Will companies be in the position to pay this amount?
    Or will they shift the burden to farmers?
    Remember companies were promised cheap gas from Pak Iran gas pipeline project in return of this project


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >