دنیا کو ترسیلات زر میں اضافے کے لئے پاکستان جیسے اقدامات اٹھانے چاہیے، آئی ایم ایف

دنیا کو ترسیلات زر میں اضافے کے لئے پاکستان جیسے اقدامات اٹھانے چاہیے، آئی ایم ایف

دنیا کو ترسیلات زر میں اضافے کے لئے وہ تمام اقدامات اٹھانے چاہیے جو پاکستان نے کرونا وائرس کی وبا کے دوران اٹھائے تھے، یہ بات بین الاقوامی مالیاتی فنڈ کی سٹریٹیجی، پالیسی و جائزہ ڈیپارٹمنٹ کے ڈپٹی یونٹ چیف ڈاکٹر رونالدکان گنی کودر اور اسی ڈیپارٹمنٹ سے وابستہ اکانومسٹ سعد قیوم نے اپنے ایک مشترکہ آرٹیکل میں کہی ہے۔

ڈاکٹر رونالدکان گنی کودر اور اکانومسٹ سعد قیوم کا اپنے مشترکہ آرٹیکل میں کہنا تھا کہ کرونا وائرس کی عالمی خطرناک وباء نے ان ممالک کو سب سے زیادہ متاثر کیا ہے جو سمندر پار مقیم کارکنوں کی جانب سے بھجوائی گئی ترسیلات زر پر انحصار کرتے تھے، کورونا وائرس سے سب سے زیادہ بیرون ممالک نقل مکانی کرنے والے ورکرز کا روزگار متاثر ہوا ہے۔

انہوں نے اپنے آرٹیکل میں کہا کہ بہت سے ممالک نے اس وباء کی وجہ سے اپنے امیگریشن کے قوانین کو مزید سخت کردیا ہے، جس کے باعث سمندر پار مقیم ورکرز کی پریشانیاں مزید بڑھ گئی ہیں، بیرون ممالک نقل مکانی کرنے والے ورکرز میں سے بیشتر کو میزبان ممالک میں سماجی تحفظ اور امداد کا حق حاصل نہیں ہوتا کیونکہ ان کے ویزوں کی نوعیت مختصر مدت کیلئے ہوتی ہے۔

آئی ایم ایف کے دونوں عہدیداروں نے اپنے مشترکہ آرٹیکل میں لکھا کہ وبا کی وجہ سے تیل کی قیمتوں میں کمی سے خلیج اور روس سمیت تیل پیدا کرنے والے ممالک میں کام کرنے والے اوورسیز ورکرز کی پریشانیوں میں مزید اضافہ ہوا ہے، کیونکہ وبا کے دوران تیل کی پیداوار اور کھپت میں واضح فرق آ کیا گیا تھا، جس کی وجہ سے کئی ممالک کو اپنی آئل ریفائنری اب بند کرنی پڑیں۔

آرٹیکل کے مطابق عالمی بینک کی جانب سے خدشہ ظاہر کیا گیا تھا کہ اپریل 2020 میں ترسیلات زر میں 20 فیصد کمی واقع ہوگی،عالمی ترسیلات زر میں یورو خطہ کا تناسب 19 فیصد اور خلیج تعاون کونسل کا حصہ 18 فیصد ہے جبکہ خلیج تعاون کونسل کے ممالک کا 2020ء میں حصہ منفی 13 فیصد تک ریکارڈ کیا گیا ہے، تاہم انہوں نے کہا کہ دنیا کو ترسیلات زر میں اضافہ کرنے اور اس کی ترسیل کو پہلے کی طرح سہل بنانے کے لیے قوانین میں مزید بہتری لانا ہو گی۔

ڈاکٹر رونالدکان گنی کودر اور اکانومسٹ سعد قیوم کا اپنے مشترکہ آرٹیکل میں ترسیلات زر میں اضافے کے لئے پاکستان کی جانب سے کیے گئے اقدامات کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان نے رقم ٹرانسفر کرنے والے اداروں کی فیس میں کمی اور ترسیلات زر کو در غیبت دی ہے جو کہ ایک بہترین قدم ہے، پاکستان کی طرح دیگر ممالک کو بھی ترسیلات زر میں اضافے کے لئے پاکستان کی پیروی کرنی چاہیے۔

  • Imran Khan has done great in every crisis. Remember the Donald Trump and Imran khan Twitter war, then the February short war with India, then the Covid-19 and now this. He has been exception in his performance, but of course the economic problems and the debt trap was outstanding and will continue to hurt Pakistan for a while. Imran khan minimized the effects to a great extent though.


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >