آمدن چھپانے پر ملزم کو بغیر صفائی دئیے گرفتار کرنیکا فیصلہ

آمدن چھپانے پر ملزم کو بغیر صفائی دئیے گرفتار کرنیکا فیصلہ

حکومت نے آمدنی چھپانے والوں کیخلاف گھیرا تنگ کرلیا، حکومت نے بجٹ میں فنانس بل کے ذریعے ایف بی آر کو آمدنی چھپانے پر صرف شک کی بنیاد پر سیاست دانوں،بیورو کریٹس، صحافیوں، صنعت کاروں اور تاجروں سمیت کسی بھی شخص کو صفائی کا موقع دیئے بغیر گرفتار کرنے کے اختیارات دینے کا فیصلہ کرلیا ہے۔

ایف بی آر کی جانب سے آمدنی چھپانے کے شبے میں گرفتار کیے جانے والے فرد کو 24 گھنٹے کے اندر اندر متعلقہ اسپیشل جج یا جوڈیشل مجسٹریٹ کے سامنے پیش کرنا ہوگا،ایف بی آر حکام کا کہنا ہے کہ یہ قانون کسی خاص طبقے کے لیے نہیں بلکہ اس کا اطلاق سیاست دانوں، بیورو کریٹس، صحافیوں، صنعت کاروں و تاجروں اور خود ایف بی آر کے اپنے افسران و اہل کاروں سمیت ہر شخص پر لاگوہوگا۔

جس کسی پر بھی ٹیکس چوری کرنے اور ٹیکس بچانے کے لیے آمدنی چھپانے کا شک ہوگا،ایف بی آر کا ان لینڈ ریونیو آفیسر اس سیاست دان، بیورو کریٹ، صحافی، وکیل یا کسی عام شخص کو گرفتار کرسکے گا،ایف بی آر حکام کا کہنا ہے کہ فنانس بل کے ذریعے انکم ٹیکس آرڈی ننس کی سیکشن 203 اے میں ترمیم کی تجویز دی گئی اور سیکشن 203 بی میں گرفتاری کا طریقہ کار تجویز کیا گیا ،پارلیمنٹ سے فنانس بل کے ذریعے ان مجوزہ قوانین کی منظوری کے بعد صدر کے دستخطوں کے بعد اس کا اطلاق ہوگا،حتمی فیصلہ پارلیمنٹ کی منظوری سے ہوگا۔

ترمیم میں کہا گیا کہ ایف بی آر کے کم از اکم اسسٹنٹ کمشنر ان لینڈ ریونیو کے عہدے کے برابر کے ان لینڈ ریونیو آفیسر کو کسی بھی شخص کے بارے میں آمدنی چھپانے کے شواہد سے متعلق مواد کی بنیاد پر اسے گرفتار کرنے کے اختیارات ہوں گے اور اس آرڈیننس کے تحت تمام گرفتاریاں کوڈ آف کریمنل پروسیجر ایکٹ 1898 کی متعلقہ شقوں کے مطابق عمل میں لائی جائیں گی،کسی کمپنی کے آمدنی چھپانے کا شبہہ ہوا یا آمدنی چھپانے میں ملوث پائی گئی تو اس کے مجاز ڈائریکٹر اور افسرکو گرفتار کیا جاسکے گا۔

قانون میں بتایا گیا کہ متعلقہ ان لینڈ ریونیو آفیسر کو آمدنی چھپانے کے جرم اور آمدنی چھپانے کے شبہے میں گرفتار کیے جانے والے شخص کے بارے میں فوری طور پر متعلقہ اسپیشل جج کو حقائق کے بارے میں آگاہ کرنا ہوگا، اسپیشل جج متعلقہ ان لینڈ ریونیو آفیسر کو گرفتار شخص کو پیش کرنے کے لیے ہدایات جاری کرسکتا ہے ان لینڈ ریونیو افسر کو ان ہدایات پر عمل درآمد کرنا ہوگا۔

قانون کے مطابق اگر کسی جگہ اسپیشل جج نہیں ہے یا اسپیشل جج کی عدالت کا فاصلہ زیادہ ہونے کی وجہ سے گرفتار شخص کو 24 گھنٹے کے اندر پیش کرنا ممکن نہ ہو تو اس صورت میں ان لینڈ ریونیو آفیسر گرفتار شخص کونزدیکی جوڈیشل مجسٹریٹ کے سامنے پیش کرے گا،سماعت کے دوران ملزم کو ضمانت دینا یا ضمانت مسترد کرنے کا اختیار اسپیشل جج کو ہوگا جوکہ ضمانتی مچلکوں پر بھی ضمانت دے سکتا ہے۔

سماعت کے دوران اسپیشل جج کسی بھی مرحلے پر کسی بھی وجہ سے ضمانت منسوخ بھی کرسکے گا،کیس کی انکوائری کے لیے اگر ملزم کو زیر حراست رکھنا ہوگا تو اس صورت میں ان لینڈ ریونیو آفیسر اسپیشل جج یا جوڈیشل مجسٹریٹ کو ملزم کے ریمانڈ کی تحریری درخواست کرسکتا ہے اسپیشل جج یا جوڈیشل مجسٹریٹ ریکارڈ دیکھ کر ملزم کا 14 دن کا ریمانڈ دے سکتا ہے۔

ٹیکس ماہرین کا کہنا ہے کہ اس قانون کے سیاسی مقاصد کے لیے غلط استعمال کے ساتھ ساتھ ایف بی آر کی ٹیکس اتھارٹیز کی طرف سے صنعت کاروں و تاجروں سمیت دوسرے ٹیکس دہندگان کو ہراساں کرنے کے لیے غلط استعمال کیا جاسکتا ہے۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >