عالمی بنک بھی پاکستان کی مثبت معاشی سرگرمیوں کا معترف

ورلڈ بینک کے کنٹری ڈائریکٹر برائے پاکستان ناجی بنہاسین بھی پاکستان کی مثبت معاشی سرگرمیوں کے معترف ہو گئے، کہتے ہیں کہ پاکستان کاروباری سرگرمیوں میں بہتری کی راہ پر گامزن ہے۔

تفصیلات کے مطابق سرمایہ کاری بورڈ کے زیراہتمام منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ناجی بنہاسین نے کہا کہ پاکستان کاروباری سرگرمیوں میں بہتری کے لیے درست سمت پر گامزن ہے، تاہم کاروباری سرگرمیوں کے فروغ کے لیے ڈیجیٹالائزشن بہت ضروری ہے۔

تقریب کے دوران برطانوی ہائی کمشنر کرسٹین ٹرنرنے کہا کہ پاکستان اور برطانیہ کے تعلقات بہت اچھے ہیں، ان کا کہنا تھا کہ ان کی ترجیح معیشت اور سرمایہ کاری ہے، پاکستان کو جی ڈی پی کے دوگنا سرمایہ کاری کی ضرورت ہے۔ جبکہ ملک کی ترقی کے لیے مضبوط معیشت میں بہتری ضروری ہے۔ دوسری جانب ڈوئنگ آف بزنس درجہ بندی میں پاکستان نے اپنی درجہ بندی بہتر کی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ پاکستان میں بیرونی سرمایہ کاری کے وسیع مواقع موجود ہیں اور غیر ملکی کمپنیوں کی جانب سے پاکستان میں سرمایہ کاری میں اضافہ ہوا۔

تقریب کے دوران پاکستان کے مشیر برائے ادارہ جاتی اصلاحات ڈاکٹر عشرت حسین نے کہا کہ پاکستان برآمدات کے فروغ کے لیے سنگل ونڈو کا آغاز کرنے جارہاہے۔نجکاری کے شعبے کو زیادہ مواقع فراہم کرنا وزیراعظم کی ترجیح ہے۔

انہوں نے کہنا تھا کہ موجودہ حکومت کے تحت ایف بی آر میں کلیمز کی کلیرنس کے لیے آٹومیٹڈ سسٹم متعارف کروایا گیا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ گزشتہ سال ملکی تاریخ میں سب سے زیادہ 250 ارب کے ریفنڈ دئیے گئے اوررواں مالی سال کے ابتدائی نو ماہ میں 220 ارب روپے کے ری فنڈذ دئیے گئے اوریہ سب ڈیجیٹالائزیشن کے باعث ممکن ہوا۔

اس موقع پر سرمایہ کاری بورڈ نے پاکستان ریگولیٹری ماڈرنائزیشن کے اقدمات سمیت تین رپورٹس بھی جاری کیں۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >