فیس بک پر وائرل ویڈیو نے 48 سال سے لاپتہ شخص کو خاندان سے ملادیا

Facebook Video
فیس بک پر وائرل ویڈیو بیمار بنگلادیشی شخص کو 48 سال بعد اپنے بچھڑے خاندان سے ملانے کا ذریعہ بن گئی۔

خاندان کے مطابق 30 سالہ حبیب الرحمان شمال مشرقی علاقے سلہٹ کا رہائشی تاجر اور چار بچوں کا باپ تھا جب وہ 1972 میں کام کے سلسلے میں چٹاگانگ گیا اور لاپتہ ہوگیا۔

اس کے خاندان کے اکثر افراد جو اب بیرونِ ملک مقیم ہیں انہوں نے اسے بہت ڈھونڈا لیکن ناکام رہے ۔ پھر امریکا میں مقیم ان کے ایک پوتے کی بیوی نے انہیں اُس ویڈیو میں دیکھا جو رواں ماہ فیس بک پر ڈالی گئی تھی۔

گزشتہ 5 سال سے حبیب الرحمان کی دیکھ بھال کرنے والی خاتون رضیہ بیگم نے بتایا کہ رحمان خانہ بدوش ہوگئے اور مزاروں پر ہی رہتے تھے۔ حبیب الرحمان کی ہاتھ کی ہڈی ٹوٹ گئی تھی لیکن غربت کی وجہ سے وہ اپنی سرجری کی استطاعت نہیں رکھتے ۔ انہیں کسی نے مشورہ دیا کہ وہ اس کی حالتِ زار کی ویڈیو بنائے اور سوشل میڈیا پر اس ویڈیو کے ذریعے مدد کی اپیل کرے۔

مریض حبیب الرحمان نے مشورہ مان کر ویڈیو بنائی جو فیس بک پر تیزی سے وائرل ہوئی اور کئی لوگوں نے اسے شیئر کیا جبکہ کم از کم 10 لاکھ افراد نے اس ویڈیو کو دیکھا۔

رحمان کے 20 سالہ پوتے کفایت حسین نے بتایا کہ ویڈیو دیکھ کر وہ اپنے حبیب الرحمان کے دونوں بیٹوں کے ہمراہ فوری طور پر اسپتال پہنچے تو دیکھا کہ وہ ہمارے دادا ہی تھے۔ کفایت کے مطابق انکے دادا ہمیں پہچان نہیں پائے لیکن جیسے ہی انہوں نے اپنے کزن کو دیکھا تو فورا پہچان گئے اور بچوں کی طرح رونے لگے۔

انہوں نے مزید بتایا کہ اس خبر پر خاندان والے بہت خوش ہیں اور یہ خبر سنتے ہیں ان کے قریبی رشتہ دار وں اور گھر والوں نے امریکا اور برطانیہ سے فوری طور پر بنگلہ دیش آنے کا فیصلہ کیا۔

رپورٹ کے مطابق حبیب الرحمان سمینٹ کا کاروبار کرتے تھے اور اُن کے چار لڑکے تھے، اُن کی اہلیہ کا انتقال سنہ 2000 میں ہوا۔


24 گھنٹوں کے دوران 🔥

View More

From Our Blogs in last 24 hours 🔥

View More

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept

>