خیبرپختونخوا پولیس کے ہاتھوں برہنہ تشدد کا نشانہ بننے والا عامر تہکالی کون ہے؟

کچھ روز قبل پولیس کے ہاتھوں برہنہ تشدد کا نشانہ بننے والا عامر تہکالی کون ہے؟ خیبرپختونخوا پولیس نے کیسے اپنا کیس خراب کیا؟ سنئے طارق متین سے

طارق متین کا کہنا تھا کہ وہ عامرتہکالی جس نے پولیس کو گالیاں دیں، گھٹیا زبان استعمال کی، دھمکیاں دیں، اصولی طور پر تو عوام کو اسکے خلاف کھڑا ہونا چاہئے تھا لیکن خیبرپختونخوا پولیس نے اسے برہنہ کرکے تشدد کا نشانہ بناکر اور اسکی ویڈیو بناکر اپنا ہی کیس خراب کرلیا اور ثابت کردیا کہ وہ بھی باقی صوبوں کی پولیس سے مختلف نہیں ہے۔

خیبرپختونخوا پولیس کی وجہ سے ہی سوشل میڈیا پر لوگ عامر تہکالی کے حق میں ٹرینڈ کررہے ہیں حالانکہ وہ فون پر پولیس کو گالیاں دیتا اور دھمکیاں دیتا رہا۔ اس عامر تہکالی نے کچھ دن پہلے ایک ویڈیو بناکر خیبرپختونخوا پولیس کو غلیظ گالیاں دیں، برابھلا کہا، دھمکیاں دیں اور عامر تہکالی نشے کی حالت میں تھا۔

اسکے بعد عامرتہکالی گرفتار ہوا، ہونا تو یہ چاہئے تھا کہ اسے سائبر کرائم ایکٹ کے تحت انصاف کے کٹہرے میں کھڑا کیا جاتا لیکن تہکال پولیس نے اسے بری طرح مارا پیٹا، اسے تشدد کا نشانہ بنایا اور اسے جسم کے نازک حصوں پر ضربیں لگائیں۔ اسکے بعد پولیس نے اسے برہنہ کیا اور برہنہ کرنے کی اسکی ویڈیو بنائی۔ پولیس نے اسے ننگا پھرایا، برہنہ کرکے بھی تشدد کیا اور گالیاں دیں اور اپنی ہی ویڈیو بنالی۔

پولیس نے نہ صرف ویڈیو بنائی بلکہ اسے وائرل بھی کردیا، اس پر اگرچہ آئی جی خیبرپختونخوا، وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا نے نوٹس لیا، ایس ایچ او شہریار کو معطل کردیا لیکن خیبرپختونخوا پولیس جسے ناصردرانی نے سیاسی مداخلت سے پاک کیا، وہ تبدیلی کا پوسٹر بوائے تھے، انکی وجہ سے ہی تحریک انصاف بغیر کسی اتحادیوں کی مدد سے خیبرپختونخوا میں اقتدار میں آئی تھی۔ جسے تحریک انصاف پوسٹر بوائے کہتی تھی بعد میں اسکی ہی چھٹی کرادی۔

OR comment as anonymous below

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


24 گھنٹوں کے دوران 🔥

View More

From Our Blogs in last 24 hours 🔥

View More