لاہور گرامر سکول میں طالبات کو جنسی طور پر ہراساں کیا جانے لگا

لاہور کے معروف پرائیویٹ سکول میں بچیوں کو جنسی طور پر ہراساں کیا جانے لگا

لاہور کے علاقے غالب مارکیٹ میں لاہور گرامر سکول ون اے ون برانچ میں لڑکیوں کو جنسی طور پر ہراساں کیا جانے لگا ۔ سکول انتظامیہ بھی مبینہ طور پر ہراسانی کا شکار بچیوں کو چپ کرانے لگی ۔ سکول میں زیر تعلیم بچیوں نے انتظامیہ کو اور خوتین اساتذہ کو ہراسگی سے متعلق بتایا تو انہوں نے بھی اپنے کولیگ استاد کو بچانے کے لیے معاملے کو دبانے کی کوشش کی ۔

انتظامیہ نے بھی استاد کے روپ میں موجود ان بھیڑیوں کے خلاف کوئی کارروائی نہ کی متاثرہ لڑکیوں کو تنگ آ کر سوشل میڈیا کا سہارا لینا پڑا۔ جس کے بعد سکول انتظامیہ نے مجبوراً ایکشن لیا۔

ایل جی ایس غالب مارکیٹ میں گزشتہ 4،5 سال سے زیر تعلیم بچیوں کو جنسی طور پر ہراساں کیا جا رہا تھا ، متاثرہ لڑکیوں نے تنگ آ کر سکول انتظامیہ اور اپنی خواتین اساتذہ کو شکایت کی تو سب معاملے کو ڈھکنے لگے اور کوئی اپنے کولیگ اساتذہ کے خلاف کارروائی کرنے کو تیار نہیں تھا۔

سکول سے فارغ التحصیل اور موجودہ طالبات نے سوشل میڈیا پر مہم چلائی جس کے بعد سکول انتظامیہ نے ایکشن لینے کا سوچا، او لیول اور اے لیول کی طالبات کو ہراساں کرنے والوں میں اعتزاز رحمان شیخ، عمر شریف اور زاہد اقبال وڑائچ نامی ٹیچرز شامل تھے۔

اس معاملے کو جب سوشل میڈیا پر فنکاروں اور نامور صحافیوں کی جانب سے اٹھایا گیا تب کہیں جا کر سکول انتظامیہ کو ہوش آیا۔

موجودہ اور فارغ التحصیل طالبات کی جانب سے الزام عائد کیا گیا کہ اعتزاز احمد شیخ نامی استاد ان کو دوران کلاس اور سپورٹس یا کہیں تفریحی موقع پر ہراساں کرتے اور سوشل میڈیا کے ذریعے غیر اخلاقی تصاویر بھیجتے۔

زاہد اقبال وڑائچ پر الزام عائد کیا گیا کہ وہ کلاس کے دوران لڑکیوں کو اپنے پاس بٹھاتے اور غیر ضروری طور پر پکڑ کر اپنے ساتھ لگاتے اور سیکشن بدلنے والی طالبات کو کم نمبر دیتے یا فیل کر دیتے تھے۔

ایک طالبہ کے مطابق اس نے پرنسپل کو اساتذہ کے رویے سے متعلق شکایت کی تو انہوں نے کہا کہ سکول میں ایسے کپڑے مت پہن کر آیا کریں جس سے کوئی مرد ان کی جانب دیکھے کیونکہ سکول کے کوڈ آف کنڈکٹ کے مطابق کپڑوں کیلئے بھی ایک اصول وضع کیا گیا ہے لہٰذا اس کا شکایت کرنا فائدہ مند ثابت نہ ہوا۔

EDIT: If you’re a journalist and you repost this statement without taking my consent first, you are a conscienceless…

Posted by Ayesham Khan on Sunday, June 28, 2020

ایک اور طالبہ کے مطابق عمر شریف نامی استاد کی بیوی بھی اسی سکول میں پڑھاتی تھیں جو کہ شکایت کرنے والی لڑکیوں کو دھمکاتیں اور چپ رہنے کا مشورہ دیا کرتی تھیں۔

تازہ اطلاعات کے مطابق لاہور گرامر سکول انتظامیہ نے ایکشن لیتے ہوئے چاروں اساتذہ کو نوکری سے فارغ کردیا ہے۔

یاد رہے کہ ایل جی ایس( لاہور گرامر سکول) نامور سکول اور لاہور میں بہتر معیار تعلیم کے حوالے سے جانا جانے والا سکول تھا جہاں پر گزشتہ کئی سالوں سے بچیوں کو جسمانی اور ذہنی طور پر اذیت کا سامنا رہا۔

    (1 posts)

    ye kia bat he ke teachers ko farig kr dia he in kanjeon ko to zinda sangsar kia jaye madar chod bharwe mujhe lata he ye yahan se to buch niklegen lekin inke apne bachon ke sth jub ye kuch hoga tab tak bt der ho chuki hogi

    12
    1

    (1 posts)

    pakistan men jub tak education system ek ni ho jata tab tak ye sub chalta rahega ab to bohat hi be hayai ka time a gya he kisi pe bhi trust ni kia ja sakta teachers to maan baap ka dusra naam hen or yahan pe sex ki classes chal rahi hen apne hi bachon ke sath 🙄

    7
    1

    Senator (1k + posts)

    This tells you what kinda society we are living in..they are only fired but if you read the letter written to these predators seems as if school is mourning the loss of very hardworking employees leaving it. These monsters should be publicly ashamed and behind bars for life. I request the government and parents to take legal action against these cu*ts and put them behind bars for life. Also,  a strict action should be taken against school administration to allow such horrific abuse for years.

    7
    1

    (65 posts)

    I reckon as 99.999% of cases it was all consensual and some of it mightbjhave not happemed or the teacher was  having an affair with some other girl and other girls got jealous.    As with  99.99 cases thats also false but  the teachers without any proof will be termminated…..

    3
    1

    Below is a letter from Director, Mrs. Nighat Ali.

    Dear Alumni & Current Students.

     

    I pray you and your families are safe in these turbulent times.

    As you are all aware, since yesterday certain troublesome instances have been highlighted on social media that have deeply disturbed me. I am aware that ignoring such situations can lead to a cycle of ongoing harassment and victimisation, something I would never allow on both a personal or professional level.

     

    I want to take this opportunity to assure all those students who have voiced their grievances that nothing will remain un-addressed nor un-resolved.

     

    As Director Lahore Grammar School, I take any such allegations that endanger our student’s welfare with utmost seriousness. As a first step reflection of this commitment the termination of all the employees highlighted in the various posts has already been carried out. They are no longer associated with Lahore Grammar School-1A1. In addition none of the accused will be allowed to continue teaching nor working in support staff positions at any of our sister branches.

     

    We value our students and look upon them as part of our larger family. A full investigation will be launched, over seen by myself to ensure that such instances never tarnish our student’s educational experience.

    On parting I would like to urge our alumni to remember the positively significant role their alma mater has played in their lives through the years they have spent with us.

     

    May Allah protect you all.

     

    Best Regards

     

    Mrs. Ali

    Director

    Lahore Grammar School

    3
    1

    (4 posts)

    School wale es mae shamil jurm hn tb hi sirf teachets ko inkala police ko bula kr karwai krni chsheye sakhta saza dyne chaheye ta k teacher k rop mae en bheriyon ko anjam tak pohnchana chaheye

OR comment as anonymous below

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


24 گھنٹوں کے دوران 🔥

View More

From Our Blogs in last 24 hours 🔥

View More