تین ہزار سال قدیم واٹر سپلائی سسٹم

تین ہزار سال قدیم واٹر سپلائی سسٹم

کاریز بے شمار کنووں پر مشتمل زیر زمین ایک ایسا واٹر سپلائی سسٹم ہے، جس میں پانی کو بنا کوئی توانائی خرچ کیے زمین کی نچلی تہہ سے اوپر والی تہہ تک لایا جاتا تھا، جسے آس پاس کی بستیاں پینے اور آبپاشی کے لئے استعمال کرتی تھیں۔

بے شمار کنووں پر مشتمل یہ تین ہزار سال قدیم واٹر سپلائی سسٹم ایران جس کا قدیم نام پرشیا ہے میں ایک ہزار قبل مسیح میں دریافت کیا گیا تھا، جس میں ڈھلان والی جگہ کو دیکھتے ہوئے وہاں کو کنواں کھودا جاتا تھا، پھر اس کنویں کے ساتھ ساتھ مزید کنویں کھودے جاتے تھے، جن میں پانی کے گزرنے کے لئے راستے بھی بنائے جاتے تھے۔

تین ہزار سال قدیم اس آبی نظام میں کھودے گئے کنووں میں سے چشمے پھوٹ پڑتے تھے، جن میں سے پانی آہستہ آہستہ زمین کی اوپر والی تہہ میں پہنچ جاتا تھا اور ایک کنویں کے بھر جانے کے بعد پانی دوسرے کنویں میں داخل ہونا شروع ہو جاتا تھا اور اس طرح سے کھودے گئے سارے کنویں ایک ایک کر کے بھر جاتے تھے اور ان بھرے ہوئے کنووں میں سے آس پاس کے مکین پانی کو پینے اور آبپاشی کے لئے استعمال کرتے تھے۔

تین ہزار سال قدیم واٹر سپلائی سسٹم

آج کے جدید دور جس میں زیر زمین پانی کو نکالنے کے لیے موٹروں کا استعمال کیا جاتا ہے، مگر کاریز کا آبی نظام 22 ممالک میں رائج ہے جس کے ذریعے لوگ آب پاشی کرتے ہیں، کاریز کو مختلف ممالک میں مختلف ناموں سے پکارا جاتا ہے اب تک کی تحقیق کے مطابق کا ریز کے بیس مختلف نام ہیں،جن سے اس نظام کو پکارا جاتا یے۔

تین ہزار سال قدیم واٹر سپلائی سسٹم

پاکستان میں بھی رقبے کے لحاظ سے سب سے بڑے صوبے بلوچستان میں کاریز کا نظام موجود ہے، جو چند برس قبل بلوچستان میں آنے والے سیلاب میں منہدم ہو گیا تھا لیکن اب اس نظام کو دوبارہ بحال کر دیا گیا ہے، جسے اقوام متحدہ کے تعلیم، سائنسی اور ثقافتی ادارے (یونیسکو) نے سال 2017 میں دنیا میں تاریخی ورثوں کی فہرست میں شامل کر لیا ہے۔

تین ہزار سال قدیم واٹر سپلائی سسٹم تین ہزار سال قدیم واٹر سپلائی سسٹم


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >