الفا براوو چارلی کے ‘گل شیر’ نے وزیراعظم کے نام اپنے پیغام میں کیا کہا؟

الفا براوو چارلی کے 'گل شیر' نے وزیراعظم کے نام اپنے پیغام میں کیا کہا؟

اگر آپ کا تعلق 90 کی دہائی سے ہے تو آپ قومی ٹی وی پر نشر کیے جانے والے ڈرامے الفا براوو چارلی سے بھی واقف ہوں گے جس میں ایک کردار کیپٹن گل شیر کے نام سے تھا۔

حال ہی میں گل شیر کا کردار نبھانے والے لیفٹیننٹ کرنل (ر) سید قاسم شاہ نے اپنا ایک ویڈیو پیغام جاری کیا جس میں انہوں نے وزیراعظم عمران خان سے متعلق اپنے خیالات کا اظہار کیا ہے۔

لیفٹیننٹ کرنل (ر) سید قاسم شاہ کے ویڈیو پیغام کو تحریک انصاف کے آفیشل سوشل میڈیا پلیٹ فارم پر بھی شیئر کیا گیا جسے اب تک ہزاروں افراد دیکھ اور پسند کر چکے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان نے1987 میں ورلڈ کپ ہارنے کے بعد کرکٹ چھوڑ کر ریٹائرمنٹ کا فیصلہ کرلیا تھا لیکن اسی دوران اُنہیں اس بات کا احساس ہوا کہ اگر کرکٹ چھوڑ دی تو کینسر اسپتال بنانے کا خواب پورا نہیں ہو گا۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان نے اسپتال بنانے کی خاطر دوبارہ سے اُسی محنت، لگن اور جستجو کے ساتھ کرکٹ کھیلنا شروع کی اور ایک بار پھر ورلڈ کپ بھی قریب آگیا اور عمران خان نے سوچا کہ ورلڈ کپ جیت کر ہی کینسر اسپتال بن سکتا ہے اور اسی دوران اُنہوں نے کینسر اسپتال کی تعمیر اپنی زندگی کا اہم مقصد بنالیا۔

سید قاسم شاہ نے بتایا کہ نیوزی لینڈ کی ایمبیسی میں ایک عشایئے کے دوران عمران خان نے کہا کہ ہم یہاں ورلڈ کپ لینے آئے ہیں اور لے کر ہی جائیں گے۔ جس پر لیفٹیننٹ کرنل (ر) سید قاسم شاہ کو بھی تعجب ہوا کہ ٹیم کی خراب حالت کے باوجود بھی عمران خان اس طرح کے بڑے بیان دیئے جا رہے ہیں لیکن انہیں معلوم تھا کہ جس نیت کے ساتھ وہ چل رہے ہیں اس میں اللہ تعالیٰ اُن کی مدد کرے گا۔

وزیراعظم کی سیاست سے متعلق سید قاسم شاہ نے کہا کہ جب عمران خان نے سیاست میں قدم رکھا تھا تو اُنہوں نے یہ فیصلہ کیا کہ وہ پاکستان سے گندگی صاف کرکے اُسے واپس اپنے ٹریک پر لے لائیں گے۔ انہوں نے پاکستان کی ترقی کو اپنا مقصد بنایا اور اس مقصد کو حاصل کرنے کے لیے اُنہیں ایک بڑا عہدہ درکار تھا، پھر اللہ تعالیٰ نے اُن کی مدد کی اور اُنہیں پاکستان کا وزیراعظم بننے کا موقع دیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ اب انہیں یقین ہے کہ اس بندے نے تب جو کہا تھا کر کے دکھایا تھا اس لیے یقین ہے کہ "یہ بندہ کرسکتا ہے” اور انہوں نے وزیراعظم کے اس عزم میں ان کا ساتھ دینے کا کہا اور بتایا کہ جب تک عمران خان اس مشن کے ساتھ ہیں وہ بھی ان کا ساتھ دیں گے۔

  • اللّٰہ کے فضل و کرم سے عمران خان کی جہد و جہد نے اس قوم کو سیاسی شعور دے دیا ھے اور اب اس ملک پر ڈاکو لٹیرے مسلط نہیں ہو سکیں گے اور پاکستان کے اداروں میں بھی اللّٰہ کا خوف پیدا ہو چکا ھے اور آئیندہ کبھی کیسی چور ڈاکووں خاندانوں کو اس ملک پر مسلط نہیں کریں گے جو ماضی میں اداروں میں موجود کالی بھیڑیں ان کرپٹ خاندانوں کو آپنے ذاتی مفادات کی خاطر ملک اور عوام پر مسلط کرتے رہے ہیں اب عوام بیدار خود سے اپنا لیڈر منتخب کیا کریں گے

  • Salam everyone
    I just add up few words on this topic. I am born and raised in lahore. And being a lahori I watched cricket and imran khan very closely since 1979 as a school boy.
    And great admirer of imran khan.
    And most of our age group freinds
    Had seen and remembered that Golden time of our cricket history when we produced world top cricketer’s and imran khan was one of them who still shinning not on the field but trying to make our country better.

    And like most of pakistani who loved him as a cricketer most charismatic personality of 80’s 90’s. Not only in pakistan all over the cricket following nation. And almost atleast 40 years shinning star of media. And still that mesmerising influence is on our nation.

    Just one question to our nation had he any stage of that period betrayed his peoples and country.

    Just one question to all our nation.

    Please make sensible comments
    Not stupid one.


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >