مسلمان نہیں لیکن مختصر لباس پہننا پسند نہیں،پاکستانی اداکارہ سنیتامارشل

ملکی معروف اداکارہ و ماڈل سنیتا مارشل نے اپنے ایک انٹرویو کے دوران کہا کہ پاکستان میں سوشل میڈیا پر فالوورز کی دوڑ ہے ہمارے یہاں ایک ریس لگی ہوئی ہے کہ کس اداکار کے انسٹاگرام پر کتنے فالوورز ہیں؟ اس ریس نے بہت سے لوگوں کو متاثر کیا ہے۔ خاص طور پر اس انڈسٹری میں آنے والے نئے اداکار فالوورز بڑھانے کے چکر میں اپنی حدود سے تجاوز کرجاتے ہیں۔

معروف ماڈل نے کہا کہ سوشل میڈیا پر یہ اداکار جس طرح سے نظر آتے ہیں حقیقت میں وہ ایسے بالکل نہیں ہوتے جیسا وہ سوشل میڈیا پر خود کو ظاہر کرتے ہیں۔ اب جو لڑکیاں ماڈلنگ میں آرہی ہیں وہ "نا” کہتے ہوئے ڈرتی ہیں سوچتی ہیں کہ اگر انہوں نے مختصر لباس پہننے سے منع کیا تو انہیں شو سے نکال دیا جائے گا،سنیتا نے کہا کہ وہ ان سے کہتی ہیں کہ آپ کو اپنے اندر اتنی خود اعتمادی پیدا کرنا ہوگی کہ آپ سامنے والے کو طریقے کے ساتھ نا کہہ سکیں۔

یاد رہے کہ سنیتامارشل عیسائی مذہب سے تعلق رکھتی ہیں اور انہوں نے 12 برس پہلے پاکستانی اداکار حسن احمد سے شادی کی تھی اور اس کے بعد ان کا شمار ٹی وی انڈسٹری کے نامور جوڑوں میں ہونے لگا۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہم پاکستان میں رہتے ہیں یہ ایک مسلم ملک ہے، اگرچہ میں مسلمان نہیں لیکن مجھے پاکستان کی ثقافت اور کلچر کے بارے میں علم ہے۔

اداکارہ نے یہ بھی کہا کہ مجھے اس طرح کا لباس پہننا بالکل پسند نہیں جو پاکستانی کلچر سے مطابقت نہیں رکھتا۔ مجھے ایسا لباس پہننا بالکل بھی پسند نہیں جس میں میرا جسم نظر آ رہا ہو۔ جب میں نے ماڈلنگ شروع کی اس وقت فیشن شوز کے دوران ماڈلز کو مختصر لباس پہننے کے لیے کہا جاتا تھا لیکن میں ہمیشہ منع کردیتی تھی ۔

ماڈل نے کہا کہ انہیں مختصر لباس پہننا پسند نہیں اسی لیے وہ کہہ دیتی تھیں کہ آپ کو مجھے شو میں لینا ہے تو لیں نہیں لینا تو نہ لیں لیکن میں خود کو عریاں کرنے کے لیے مختصر لباس نہیں پہنوں گی نہ ہی اپنی حد سے تجاوز کروں گی۔

انہوں نے کہا کہ ان کے ساتھ ابھی تک کاسٹنگ کاؤچ کا کوئی واقعہ پیش نہیں آیا۔ کاسٹنگ کاؤچ شوبز انڈسٹری میں استعمال ہونے والی خاص اصطلاح ہے جس کا مطلب کام کے بدلے کسی کے ناجائز مطالبات تسلیم کرنا ہے۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >