نور مقدم کے قاتل ظاہر جعفر کے والد کی ضمانت کیلئے درخواست، کیا ضمانت مل پائے گی؟

نور مقدم قتل کیس کی تحقیقات جاری ہیں،نور مقدم کےقاتل ظاہر جعفر کے والد نے ضمانت بعد از گرفتاری کیلئے عدالت سے رجوع کرلیا،والد ذاکر جعفر نے ضمانت بعد از گرفتاری کی درخواست دائر کر دی ہے،درخواست میں موقف اختیار کیا کہ سیشن کورٹ کے فیصلے کو کلعدم قرار دے کر ضمانت پر رہا کیا جائےٓ۔

ذاکر جعفر نے اسلام آباد ہائی کورٹ میں درخواست ضمانت دائر کی جو سماعت کے لیے مقرر کردی گئی ،جسٹس عامر فاروق کل سماعت کریں گے،جبکہ ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن کورٹ نے ملزم ذاکر جعفر کی درخواست ضمانت مسترد کر دی تھی،ظاہر جعفر کے والدین پر نور مقدم قتل کیس میں اعانت جرم کا الزام ہے، ملزم کے والدین جوڈیشل ریمانڈ پر جیل میں ہیں۔

نور مقدم قتل کیس سے متعلق دائر درخواست میں ملزمان ذاکر جعفر اور عصمت آدم جی نے ملزم ظاہر جعفر سے لاتعلقی کا اظہار کرتے ہوئے جیل سے رہائی کی استدعا کی تھی،درخواست گزاروں نے مؤقف اختیار کیا تھا کہ نور مقدم کے قتل سے ان کا کوئی تعلق نہیں،قتل کے بارے میں وہ آگاہ تھے اور نہ ہی حقائق چھپائے ہیں۔

کچھ قانونی ماہرین کے مطابق ظاہرجعفر کے والد ذاکر جعفر کیلئے تھراپی ورکس کے سی ای او ڈاکٹر طاہر ظہور کے انکشافات کے بعد ضمانت مشکل دکھائی دیتی ہے۔

ڈاکٹر طاہر ظہور کے مطابق میں نے ذاکرجعفر کو کال کرکے کہا کہ وہاں تو ایک لڑکی کی لاش پڑی ہوئی ہے جس پر ذاکر جعفر کا ری ایکشن بہت ہی حیران کن تھا اور کہا کہ شاید شراب پی لی ہوگی اس لیے قتل ہو گیا ہو گا۔

انکا مزید کہنا تھا کہ جواب سن کر ہکا بکاہ رہ گیا، ایسی خبر اگر کسی بھی والد کو بتائی جائے تو اس کی ٹانگیں کانپ جانی چاہئیں لیکن ذاکر جعفر کو قتل کا بتایا گیا تو وہ بالکل نارمل تھے جیسے کچھ ہوا ہی نہ ہو۔

تھراپی ورکس کے چیف ایگزیکٹو ڈاکٹر طاہر ظہور نے نور مقدم قتل سے مزید انکشافات کرتے ہوئے کہا کہ قتل کے بعد پولیس کو دیکھتے ہی ظاہر جعفر نے ڈرامہ شروع کر دیا تھا لیکن اس سےقبل وہ بالکل نارمل تھا،ظاہرجعفر پاگل نہیں لیکن شراب نوشی کا عادی تھا، میں نے ظاہر جعفر کے والدین کو کہا کہ اسے جلد از جلد اسپتال داخل کرایا جائے، مگر ظاہر جعفر کے والدین نے میری بات نہیں سنی،ملزم ظاہر جعفر بطور شراب نوشی کا مریض مجھے ریفر کیا گیا تھا۔

انہوں نے کہا کہ ظاہر جعفر کے والد ذاکر جعفر سے پوچھا کہ اس کے پاس کوئی اسلحہ تو نہیں لیکن انہوں نے مجھے یقین دلایا کہ ظاہر جعفر کے پاس کوئی اسلحہ نہیں ہے،ذاکر جعفر نے ہمیں کہا کہ تھراپی ورکس کے ورکرز کو لے کر جائیں اور ظاہر جعفر کو دیکھیں، جب تھراپی ورکس کی ٹیم پہنچی تو گھر کے نیچے مجمع لگا ہوا تھا جہاں موجود لوگوں نے بتایا کہ 2 دن سے دروازہ نہیں کھولا جا رہا۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >