دہلی فسادات، مسلمان پڑوسی ہندو دلہن کے مسیحا بن گئے

بھارتی مسلمانوں کے ساتھ درندگی۔ مسلمان ہندو دلہن کے مسیحا بن گئے۔۔

بھارتی دارالحکومت نئی دہلی میں مسلمانوں کی نسل کشی کی گئی لیکن مسلمانوں نے انسانیت نہیں چھوڑی۔۔ گھر گھر کے گھر جلادیئے، مساجد کی بے حرمتی کی گئی۔۔

اپنے گھر اجڑتے دیکھ کر بھی مسلمانوں نے ہندوؤں سے دشمنی نہ دکھائی۔۔ فسادات کے دوران مسلمان پڑوسیوں نے ہندو دلہن کی نہ صرف شادی کروائی بلکہ اس کو بحفاظت رخصت بھی کروایا۔۔

مشرقی دہلی میں جب مسلمانوں کے املاک کو جلایا جا رہا تھا اس وقت ضلع چاند باغ میں ساویتری پرساد کی شادی خطرے میں پڑ گئی تھی

پھر مسلمانوں نے ناممن کو ممکن بنایا اور تئیس سالہ لڑکی کی شادی کرائی۔

ساوتری نے بتایا کہ ایک دن پہلے مہندی تو اس امید سےلگائی کہ حالات بہتر ہوجائیں گے لیکن یہ تشویش تھی کہ جلاؤ گھیراؤ ہے کیسے شادی ہوگی۔۔

Dulhan

پھر مسلمان پڑوسی مدد کو آئے اور میرے اور خاندان کی حفاظت کی۔ اور مقررہ وقت اور دن پر شادی کرائی۔ والد نے کہا خوف کی وجہ سے رشتے دار تو شامل نہ ہوسکے لیکن مسلمان بھائیوں نے کمی پوری کردی۔

دہلی فسادات میں بیالیس افراد زندگی کی بازی ہارگئے جبکہ ڈھایی سو سے زائد زخمی ہیں۔

  • Lekin ye batein dekh kar bhi hindutva vale nahi samjhe ge. RSS aur BJP aise nasoor hein jinko bharatio ne bhari aksriyat se jitaya he. Ab bharat inke panje mein he. Only solution to this is balkanization of this useless federation named india.


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >