بھارت میں بندر کورونا وائرس کے نمونے چھین کر لے گئے

بھارتی ریاست اتر پردیش کے علاقے میرٹھ میں اپنی نوعیت کا یہ انوکھا واقعہ سامنے آیا ہے جہاں کھلے عام پھرنے والے بندروں نے ہیلتھ ورکر پر حملہ کیا اور اس سے کورونا کے مشتبہ مریضوں کے خون کے نمونے چھین کر لے گئے۔اس واقعہ کے بعد اس علاقے کے لوگوں میں خوف پھیل گیا کہ اب بندروں سے انسانوں میں کورونا وائرس مزید پھیلے گا۔

یہ واقعہ نئی دہلی کے قریب لگنے والے میرٹھ کے علاقے میں پیش آیا جب ہیلتھ ورکر کورونا کے مبینہ مریضوں کے سیمپل کٹس میں نمونے لے کر جا رہا تھا کہ راستے میں ہی بندروں کے ایک جھنڈ نے اس پر حملہ کیا اور3 مریضوں کے سیمپل چھین کر لے گئے۔ سیمپل کٹ چھیننے کے بعد بندر ایک درخت پر چڑھ گئے اور سیمپل کٹ کو چبانے کی کوشش کرتے رہے۔

https://www.youtube.com/watch?v=hlU8VNe3CWA

بعد ازاں میرٹھ میڈیکل کالج کے سپریٹنڈنٹ دھیرج راج نے تصدیق کی کے بندروں کی جانب سے چھینے گئے تمام سیمپل واپس حاصل کر لیے گئے ہیں اور یہ نمونے درست حالت میں ہی پائے گئے ہیں انہوں نے کہا کہ ایسا لگتا نہیں کہ سیمپل کٹ میں سے وائرس والا خون باہر نکلا ہو اس لیے پریشانی کی کوئی بات نہیں۔ دھیرج راج نے کہا کہ کورونا وائرس کا اس واقعہ سے پھیلنے کا کوئی خطرہ نہیں ان تینوں مریضوں کے دوبارہ بھی سیمپل لے لیے گئے تھے۔

کورونا وائرس کی جانوروں میں بھی تصدیق ہو چکی ہے مگر ابھی تک ایسی کوئی تحقیق سامنے نہیں آئی جس میں اس وائرس کے جانوروں سے انسانوں میں پھیلنے کا کوئی واقعہ سامنے آیا ہو۔ بھارت کے کئی شہروں میں بندر کھلے عام گھومتے ہیں ویسے تو یہ انسانوں کو نقصان نہیں پہنچاتے مگر یہ لوگوں سے ان کی اشیا مثلاً موبائل، پرس اور کھانے پینے کی اشیا ضرور چھین لیتے ہیں بلکہ کچھ علاقوں میں تو یہ تیار فصلوں کو بھی نقصان پہنچا دیتے ہیں۔

OR comment as anonymous below

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


24 گھنٹوں کے دوران 🔥

View More

From Our Blogs in last 24 hours 🔥

View More