بھارت کے لیے ایک اور بڑا دھچکا، ترک صدر نے اقوام متحدہ میں مسئلہ کشمیر اٹھا دیا

بھارت کے لیے ایک اور بڑا دھچکا، ترک صدر نے اقوام متحدہ میں مسئلہ کشمیر اٹھا دیا

بھارت کو بین الاقوامی سطح پر ایک اور بڑا دھچکا لگا ہے، ترکی کے صدر طیب اردگان نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کرتے ہوئے ایک بار پھر مسئلہ کشمیر اجاگر کرتے ہوئے دنیا کی توجہ بھارت کے ظلم اور بربریت کی جانب مبذول کروائی ہے، جو وہ مسلسل کشمیر کی وادی میں جاری رکھے ہوئے ہیں۔

خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق ترک صدر نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے ویڈیو لنک کے ذریعے خطاب کرتے ہوئے دنیا کی توجہ مسئلہ کشمیر کی جانب مبذول کرواتے ہوئے کہا کہ مسئلہ کشمیر اب بھی ایک اہم تنازع ہے اور جنوبی ایشیا کے امن کا انحصار بھی اسی مسئلے کے حل پر ہے۔

ترک صدر کا ویڈیو لنک کے ذریعے خطاب کرتے ہوئے کہنا تھا کہ بھارت نے حال ہی میں مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کو ختم کرکے اس مسئلے کو مزید پیچیدہ کر دیا ہے، جس کے بہت ہی بھیانک نتائج آنے کا خطرہ ہے، تاہم ہم مسئلہ کشمیر کا حل اقوام متحدہ کی جانب سے دی گئی قراردادوں کے مطابق چاہتے ہیں۔

  • بھارت ناجانے کیوں خطے کا امن خراب کرنا چاہتا ھے ایک دن تو ضرور بھارت کو کشمیر پر اقوام متحدہ کی قراردادوں پر لازمی عمل کرنا ہوگا۔

  • مسلمانان کشمیر کے بنیادی حقوق کا ایک برس سے زائد عرصہ گزرنے کے بعد بھی بحال نہیں ہوے۔انکی آزادی، ان کا روزگار۔انکے بچوں کی تعلیم۔ان کی مذہبی آزادی،انکی سیاسی آزادی،معاشرتی آزادی پر دن دیہاڑے ڈاکہ ڈالا گیا انکی عزتوں کو پامال کیا جارہا ہے املاک لوٹی جارہی ہیں روزگار تباہی کردیا گیا ہے،میڈیا پر بھی پابندی ہے ادویات اور خوراک کی سخت قلت ہے
    اقوام متحدہ،۔عرب لیگ۔۔اسلامی ممالک کی تنظیمیں مستقل خاموش ہیں کیا یہاں انسان نہیں رہتے ۔کیا انکی ضروریات ختم ہو گئی ہیں یا انکا اس دنیا سے کوئی تعلق نہیں
    بلکہ ان نام نہاد بین الاقوامی تنظیموں کو ھائجیک کرلیا گیا ہے یہ مسلموں کے حقوق کی غاصب اور غیر مسلموں کی نمائندگی کرتی ہیں


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >