معیشت کے بعد چین نے امریکہ کو فلمی صنعت کے شعبے میں بھی بچھاڑدیا

چین نے ایک بڑے شعبے میں پہلی بار امریکا کو پیچھے چھوڑ دیا ہے اور دنیا کی سب سے بڑی فلمی صنعت ہونے کا اعزاز حاصل کر لیا ہے۔ چین میں باکس آفس پر فلموں نے لگ بھگ 2 ارب ڈالرز کا بزنس کرلیا ہے اور امریکا کو پہلی بار اس شعبے میں پیچھے چھوڑ دیا ہے۔

چینی مارکیٹ میں اس سال فلمیں 1.99 ارب ڈالرز کا بزنس کرچکی ہیں جبکہ شمالی امریکی مارکیٹ میں فلموں کا بزنس 1.94 ارب ڈالرز کا ہے۔

چین کی مقامی فلمیں زبردست بزنس کررہی ہیں اس سال عالمی سطح پر سب سے زیادہ بزنس کرنے والی فلم بھی چین کی ”دی ایٹ ہنڈرڈ” ہے جس نے 44 کروڑ ڈالرز سے زائد کا بزنس کیا۔

دوسرے نمبر پر "بیڈ بوائز فار لائف” ہے جس نے 42 کروڑ ڈالرز کا بزنس کیا، تیسرے نمبر پر بھی چین کی "مائی پیپل، مائی ہوم لینڈ” ہے جو یکم اکتوبر کو ریلیز ہوئی اور اب تک 36 کروڑ ڈالرز کا بزنس کر چکی ہے۔

جبکہ چین کے مقابلے میں ہالی وڈ کی فلمیں زیادہ کامیاب نہیں ہوسکیں، ستمبر میں ریلیز ہونے والی ڈزنی کی مولان صرف 4 کروڑ ڈالرز کا بزنس کرسکی جبکہ وارنر برادرز کی فلم ٹینینٹ نے چینی مارکیٹ میں 6 کروڑ 40 لاکھ ڈالرز کا بزنس کیا جبکہ دنیا بھر میں یہ فلم 33 کروڑ ڈالرز سے زائد کما چکی ہے۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >