فرانسیسی صدر کو اپنے دماغ کا علاج کرانے کی ضرورت ہے ۔ اسلام مخالف بیان پر ترک صدر کا ردعمل

 

 

گستاخانہ خاکوں سے متعلق متنازعہ بیان دینے پر فرانسیسی صدر کو منہ توڑ جواب دیتے ہوئے ترک صدر طیب اردوان کا ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہنا تھا کہ یورپ کو اسلام دشمنی لے ڈوبے گی اور خود ایک دن اسلام دشمنی کے چکر میں پڑ کر خود کو صفائے ہستی سے مٹا دے گا۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ترک صدر کا کہنا تھا کہ یورپ کو جلد ہی اسلام دشمنی کی بیماری سے باہر نکل آنا چاہیے ورنہ اس کا وجود دنیا پر باقی نہیں رہے گا، یورپین ممالک کا اتحاد انہیں ڈبو دے گا، انہوں نے اپنے بیان میں فرانسیسی صدر کو دماغی مریض قرار دیتے ہوئے کہا کہ فرانسیسی صدر کو اپنے دماغ کا علاج کرانے کی ضرورت ہے۔

ترکی کے صدر طیب اردوان کا تقریب سے خطاب کرتے ہوئے پیشن گوئی کرتے ہوئے کہنا تھا کہ فرانس کے موجودہ صدر میکرون 2022 کے بعد فرانس کے صدر نہیں ہوں گے، انہیں اپنی متعصبانہ سوچ کی وجہ سے آنے والے انتخابات میں ناقابل یقین شکست کا سامنا کرنا پڑے گا۔

ترک صدر کا فلسطینی تنظیم کو اسلام اور مسلمانوں کا دفاع کرنے پر خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہنا تھا کہ ترک دنیا کا وہ واحد جرآت مند ملک ہے جس نے کھل کر اسلام اور مسلمانوں کا دفاع کیا ہے اور ہمیشہ کرتا رہے گا۔

فرانس نے اپنا سفیر واپس بلا لیا

دوسری جانب پیرس نے طیب اردوان کے فرانسیسی صدر کی ذہنی کیفیت کے حوالے سے سوال اٹھانے پر احتجاج کرتے ہوئے انقرہ سے اپنا سفیر واپس بلا لیا ہے اور ترک صدر طیب اردوان کے فرانسیسی صدر کے حوالے سے تبصرے کو ناقابل قبول قرار دیا گیا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے سے بات کرتے ہوئے فرانسیسی صدر کے دفتر سے منسلک ہے اہل کار کا کہنا تھا کہ فرانسیسی صدر کی ذہنی کیفیت کے حوالے سے ترک صدر کا بیان ناقابل قبول ہے، تاہم طیب اردوان سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ اپنی پالیسیوں کو بدلے کیوں کہ ان کی پالیسیاں ہر لحاظ سے سے خطرناک ہیں

 


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >