بھارت کی لداخ کے بعد پھر سکم کے مقام پر چینی فوج سے تازہ جھڑپیں:اب کتنا نقصان ہوا؟

بھارت کے مقامی میڈیا کے مطابق فوج نے سکم میں چینی اور بھارتی سرحد کے قریب ناکو لا سیکٹر میں دونوں افواج کے درمیان تازہ جھڑپوں کی تصدیق کی ہے۔بھارتی فوج نے جاری بیان میں کہا کہ 20 جنوری کو بھارتی اور چینی فوج کے بیچ شمالی سکم میں ایک جھڑپ ہوئی تھی اور اصولوں کے مطابق یہ معاملہ مقامی کمانڈروں نے سلجھا لیا ہے۔

انڈین میڈیا کی رپورٹنگ

اس حوالے سے بھارتی فوج نے اپنے میڈیا کو ہدایت بھی جاری کی کہ وہ اس خبر کو توڑ مروڑ کر پیش کرنے سے گریز کریں۔ برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق اس متنازع سرحدی علاقے میں جھڑپوں کے بعد دونوں ممالک میں کشیدگی کی صورتحال سنگین صورت اختیار کر گئی ہے۔

یاد رہے کہ اس سے قبل گزشتہ سال بھی وادی گلوان میں ایک جھڑپ کے نتیجے میں ایک کرنل سمیت 20 جوان ہلاک ہونے کی تصدیق کی گئی تھی جبکہ چین نے اس حوالے سے کوئی بیان نہیں دیا تھا کہ اس کے کتنے فوجی ہلاک یا زخمی ہوئے۔

حالیہ جھڑپیں چینی فوجیوں کی جانب سے ناکولا کے علاقے میں بارڈر پار کر کے بھارتی علاقے میں داخل ہونے کے نتیجے میں ہوئیں۔ بھارتی فوج کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ چینی فوج کے 20 جوان زخمی ہوئے ہیں جبکہ انہوں نے اپنی فوج کے 4 سپاہی زخمی ہونے کی تصدیق کی ہے۔

بھارت فوج کے مطابق چینی فوج کا بھی نقصان ہوا ہے تاہم اس کے بارے میں چین کی جانب سے کوئی سرکاری بیان سامنے نہیں آیا۔ چین نے اپنی فوج کے کسی بھی طرح کے نقصان کی بات تسلیم نہیں کی، اس کے بعد دونوں ملکوں کے درمیان پہلے سے موجود کشیدگی میں مزید اضافہ ہو گیا ہے اور دونوں ہی ایک دوسرے کے خلاف جارحیت کا الزام لگا رہے ہیں۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >