بھارت: مغربی بنگال کی وزیراعلیٰ نے اپنی کابینہ میں مسلمانوں کو بھی شامل کر لیا

بھارتی ریاست مغربی بنگال کی وزیرا علیٰ ممتا بینرجی نے ہندو انتہا پسندوں کے منہ پر تھپڑ دے مارا، ممتا بینرجی کی نئی کابینہ میں سات مسلمان شامل کرلئے گئے ہیں،اس نئی وزارتی ٹیم میں 7 مسلم میں چار کو کابینہ ، ایک کو آزادانہ چارج اور دو کو وزیر مملکت بنایا گیا ہے۔

وزیرا علیٰ ممتا بینرجی نے وزرا کی حلف برداری کے بعد محکموں کی تقسیم کرتے ہوئے اپنے پاس داخلہ، صحت، پہاڑ کی ترقی، زمین اصلاحات، بازآبادکاری برائے مہاجرین، اطلاعات و ثقافت و شمالی بنگال ترقیاتی امور شامل رکھ لئے ہیں۔

اس مرتبہ ممتا بینرجی نے وزار اقلیتی امور و مدرسہ تعلیم محکمہ کی ذمہ داری اپنے پاس رکھنے کے بجائے شمالی دیناج پور سے منتخب ہونے والے غلام ربانی کو وزارت اقلیتی امور و مدرسہ کی ذمہ داری دی ہے۔

ترنمو ل کانگریس کے سینئر لیڈر فرہاد حکیم جو گزشتہ دس سالوں سے شہری ترقیات اور میونسپل امور سمیت کئی اہم محکموں کو سنبھال رہے تھے کو اس مرتبہ ٹرانسپورٹ اورہاؤسنگ کا محکمہ دیا گیا ہے۔

جاوید احمد خان کو سول ڈیفنس اور محکمہ قدرتی آفات روک تھام کا چارج دیا گیا ہے۔ وزیر مملکت آزادانہ چارج کے طور پر لائبریری اور ماس ایجوکیشن کا چارج سنبھالنے والے مولانا صدیق اللہ چوہدری کو کابینہ کے وزیر کی ذمہ داری دی گئی۔

ممتابینرجی نے رواں ماہ کے آغاز میں ریاست مغربی بنگال کے انتخابات میں بھاری اکثریت سے حکمراں جماعت بی جے پی کو شکست دی، ممتا بینرجی کی پارٹی ترینمول کانگریس کو 292 سیٹوں میں سے کم از کم 200 پر کامیابی حاصل ہوئی۔


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>