میا خلیفہ،بیلا اور جی جی حدید سمیت عالمی شوبز شخصیات فلسطینیوں کیلئے بول اٹھیں

میا خلیفہ،بیلا اور جی جی حدید سمیت عالمی شوبز شخصیات فلسطینیوں کیلئے بول اٹھیں

فلسطین میں اسرائیل کے حالیہ حملوں اور مظالم پر دنیا کے بااثر افراد کی خاموشی پر اب شوبز سے وابستہ عالمی شہرت یافتہ شخصیات نے بھی سوال اٹھانا شروع کر دیئے ہیں، شوبز انڈسٹری سے شہرت پانے والی عالمی شخصیات جیسے میا خلیفہ اور فلسطینی نژاد امریکی ماڈلز حدید سسٹرز نے اس تمام صورتحال پر اظہار برہمی کیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق عالمی شہرت یافتہ اداکارہ میا خلیفہ نے ٹوئٹر پر اسرائیلی فوج کی جانب سے فلسطینیوں پر کیے جانے والے مظالم کی تصاویر شیئر کرتے ہوئے لکھا میں انسانیت کے خلاف ہونے والے جرائم دیکھ رہی ہوں جن کی امریکا سالانہ 3.8 بلین ڈالرز کے ساتھ مالی معاونت کر رہا ہے۔ 

اس ٹوئٹ میں میاخلیفہ نے ’’فری فلسطین‘‘ یعنی فلسطین کی آزادی کا ہیش ٹیگ بھی استعمال کیا۔ ان کے علاوہ فلسطینی نژاد امریکی سپر ماڈلز بہنوں جی جی اور بیلا حدید نے بھی برہمی کا اظہار کرتے ہوئے اسرائیل کے حالیہ حملوں کی مذمت کی اور اپنے آبائی ہم وطنوں سے اظہار یکجہتی کیا۔

جی جی حدید نے اپنی ایک پوسٹ میں لکھا کہ کوئی بھی شخص نسلی عدم مساوات، مخنث افراد اور خواتین کے حقوق کی مخالفت نہیں کر سکتا، ویسے تو ہر کوئی کرپشن، حکومتی بدسلوکیوں اور ناانصافیوں کی مذمت کرتا ہے۔ مگر ایسے ہی افراد فلسطینوں پر اسرائیلی مظالم پر خاموش رہنے کو ترجیح دیتے ہیں۔ ماڈل نے یہ بھی کہا کہ کوئی بھی شخص کسی خاص طرح کے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے مسئلے کا انتخاب نہیں کر سکتا۔

انہوں نے  مسجد الاقصیٰ پر اسرائیلی فوجیوں کے حملے کے بعد اسٹوری شیئر کی جس میں لکھا تھا ’’تم فلسطین کو مٹا نہیں سکو گے۔ ہم ان ماؤں کی عزت کرتے ہیں جنہوں نے پولیس کے تشدد اور ڈرون حملوں میں اپنے بچوں کو کھو دیا اور ان فلسطینی ماؤں کی جو اپنے بچوں سمیت اسرائیلی جیل میں ہیں۔

میا خلیفہ،بیلا اور جی جی حدید سمیت عالمی شوبز شخصیات فلسطینیوں کیلئے بول اٹھیں

ان کی بہن بیلا حدید نے بھی سخت الفاظ کے ساتھ ان حملوں کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ مستقبل میں آنے والی نسلیں جب پیچھے مڑ کر تاریخ کا جائزہ لیں گی تو وہ سوچیں گی کہ ہم نے کس طرح اور کیوں مسلسل فلسطینیوں پر مظالم جاری رہنے دیے۔ سیاستدانوں پر غیرجانبدارانہ لفظ استعمال کرنے پر تو تنقید کی جاتی ہے مگر دنیا غلط لوگوں کے خلاف بولنے کی بجائے اس پر خاموشی اختیار کیے ہوئے ہے۔

  • باز آجاو اب کیا فلسطین کے نام پر پورنسٹار کی مشہوریاں ہوں گی باز آجاو ابھی رمضان ختم نہی ہوا۔Siasat.pk

    • اس کے پورن سٹار ہونے پر اعتراض صرف وہ اٹھائے جس نے خود ساری زندگی پورن نا دیکھی ہو۔ ورنہ اپنی منافقت اپنے پچھواڑے میں ہی رکھیں۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >