ڈاؤن سنڈروم میں مبتلا قرآن پاک حفظ کرنے والی دنیا کی پہلی لڑکی

اردن میں پیدائشی طور پر جنیاتی بیماری ڈاؤن سنڈروم میں مبتلا بچی راون دیوائیک نے اپنی ماں کی مدد سے 7 سال کی دن رات لگن کے ساتھ قرآن حفظ کر کے مثال قائم کردی۔

تفصیلات کے مطابق جینیاتی بیماری میں مبتلا ہونے کے باوجود راون دیوائیک قرآن حفظ کرکے دنیا کی پہلی ڈاؤن سنڈروم میں مبتلا حافظ قرآن بن گئی ہیں۔ بیماری میں مبتلا لڑکی کا قرآن حفظ کرنا ایسا کارنامہ ہے جسے بلاشبہ معجزہ کہا جاسکتا ہے۔

چار بیٹیوں اور بیٹے کی ایک بیوہ ماں نے اپنی بیٹی کی ، جو ڈاؤن سنڈروم میں مبتلا ہے ، قرآن مجید حفظ کروایا اور اپنی بیٹی کو مرض میں مبتلا پہلی حافظ قرآن بنایا۔

ترک میڈیا کو انٹرویو دیتے ہوئے عزم والدہ کا کہنا تھا کہ راون دیوائیک کی پیدائش کے بعد مجھے پتہ چلا کہ میری بیٹی جینیاتی بیماری میں مبتلا ہے جس کی وجہ سے اس کی ذہنی اور جسمانی صلاحیتیں عام بچوں سے کم ہوں گی اور ذہنی نشوونما کی شرح سست ہو جائے گی۔

اواطیف جابر نے کہا کہ اس وقت میں نے اپنے رب سے وعدہ کیا تھا کہ میں اس بچی کے لئے خدا کا کلام حفظ کراؤں گی۔ شروع میں میں نے چھوٹی سورتوں کو حفظ کروائیں اور اسی دوران میں نے محسوس کیا کہ بچی کی یادداشت بہت اچھی ہے اور اسی طرح منزل کی طرف سفر شروع ہوا۔

راون کی والدہ اواطیف جابر کا ترکی میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ راون کے والد فوت ہوچکے ہیں اور مجھے ان کی والدہ ہونے پر فخر ہے۔

اواطیف کے مطابق راون ایک ایسے مرض میں مبتلا ہیں جو ان کے ساتھ زندگی بھر رہے گا لیکن اس کے باوجود راون یہ کہتے نہیں تھکتیں کہ قرآن میری زندگی ہے۔

وہ کہتی ہیں کہ جب راون دیوائیک 6 سال کی تھی ، تب انہیں اسکول میں داخل کرایا گیا اور صرف ایک سال میں ، اس کے تلفظ میں بہتری آئی مگر اس نے سکول جانے کی بجائے گھر پر رہ کر تعلیم حاصل کرنے میں دلچسپی لی اس لئے اس کو منع کرنا میں نے مناسب نہیں سمجھا۔

عواطف جابر کا کہنا تھا کہ اسکول کی چھٹی کی خرابیوں کو جانتے ہوئے میں روان کو اپنے ساتھ قرآن سینٹر لے جانے لگی ، جہاں میں بھی نے سورتیں حفظ بھی کیں۔ جب میں نے سورۃ البقرہ کے 4 صفحات حفظ کیے تو روان کے استاد نے مجھے بتایا کہ آپ کی بیٹی نے اس سورت کا پہلا حصہ حفظ کرلیا ہے۔

روان کی والدہ کا کہنا ہے کہ اگلے سات سال تک ، میری بیٹی باقاعدگی سے حفظ کرتی رہی اور رمضان کے 29 ویں دن قرآن مجید کی حفظ مکمل کیا۔

یاد رہے کہ ڈاؤن سنڈروم والے بچے عمر کے ساتھ ذہنی پختگی تک نہیں پہنچ پاتے ہیں ، یہی وجہ ہے کہ بلوغت یا بڑھاپے تک پہنچنے کے باوجود ، ان کے خیالات اور افعال بچوں کی طرح ہی رہتے ہیں اور انہیں اپنا نام ، پتہ اور موبائل نمبر یاد رکھنے میں بھی مسئلہ ہوتا ہے۔ ایسی صورتحال میں روان کا قرآن حفظ کرنا کسی معجزے سے کم نہیں۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >