ایک اور پاکستانی نژاد امریکی لینا خان جو بائیڈن کی انتظامیہ میں شامل

ایک اور پاکستانی نژاد امریکی لینا خان جو بائیڈن کی انتظامیہ میں شامل

امریکہ کی موجودہ حکومت نے ایک اور پاکستانی نژاد امریکی کو انتظامیہ میں شامل کرنے کا فیصلہ کیا ہے، پاکستان کا نام روشن کرنے کا سہرا اس بار  لینا خان کو جاتا ہے۔

خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق    دنیا کی بڑی بڑی ٹیکنالوجی کمپنیوں  پر تنقیدی تبصرے کرنے والی لینا خان  کو امریکی انتظامیہ نے فیڈرل ٹریڈ کمیشن(ایف ٹی سی) کی سربراہ مقرر کیا ہے، امریکی سینیٹ نے اس تقرری کی منظوری بھی دیدی ہے۔

اس خبر کا اعلان لینا خان نے خود ٹویٹر پر اپنے ایک بیان میں کیا اور کہا کہ کانگریس نے غیر جانبدار مقابلے، صارفین، عملے اور کاروبار وں کے تحفظ کیلئے ایف ٹی سی قائم کیا ہے، میں اس منصوبے کی نگرانی کرتے ہوئے امریکی عوام کی خدمت کروں گی۔

امریکی سینیٹر الزبتھ وارن نے اس اقدام کا خیر مقدم کرتے ہوئے اپنی ٹویٹ میں کہا کہ لینا خان کو ایف ٹی سی کا سربراہ مقرر کرنا ایک زبردست فیصلہ ہے،  لینا اس شعبے میں ماہر ہیں  اور وہ صارفین کیلئے نڈر ہوکر کام کریں گی۔

امریکی میڈیا رپورٹس کے مطابق 2دہائیوں پہلے  پاکستان سے 11 برس کی عمر میں اپنے والدین کے ہمراہ ہجرت کرکے امریکہ جانے والی لینا خان 1989 میں پیداہوئیں،وہ کولمبیا سکول میں بطور ٹیچر فرائض سرانجام دیتی ہیں، وہ  ہاؤس جوڈیشری کمیٹی کے اس اینٹی ٹرسٹ پینل کا حصہ بھی رہیں جس نے مارکیٹ میں اپنا تسلط  کیلئے الفا بیٹ(گوگل، فیس بک، ایپل اور ایمازون کا مالک ادارہ) کی جانب سے کی جانے والی کوششوں پر ایک رپورٹ جاری کی تھی۔

2017 میں لینا خان کا  "ایمازون اینٹی  ٹرٹسٹ پیراڈاکس”  مضمون شائع ہوا تھا جس میں بتایا گیا تھا کہ اینٹی ٹرسٹ صرف قیمتوں پر توجہ دیتا ہے، اور یہ ایمازون کی جانب سے اینٹی ٹرسٹ قوانین کی خلاف ورزیوں کی شناخت کرنے کیلئے مکمل طور پر ناکافی ہے۔

اس تقرری پر دنیا کی بڑی ٹیکنالوجی کمپنی ایمازون اور گوگل نے فوری طور پر تبصرے سے انکار کردیا ہے جبکہ فیس بک اور ایپل بھی چپ سادھے ہوئے ہے۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >