سربراہ آئی ایس آئی جنرل فیض حمید نے ملا عبدالغنی برادر سے ملاقات میں کیا کہا؟

برطانوی نشریاتی ادارے کا کہنا ہے کہ طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے پریس کانفرنس میں پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں بتایا کہ ڈی جی آئی ایس آئی جنرل فیض حمید نے دورہ افغانستان کے دوران طالبان کے نائب امیر ملا عبدالغنی برادر سے ملاقات کی ہے۔

ترجمان طالبان نے کہا کہ آئی ایس آئی چیف کے ہمراہ آنے والے وفد نے ہمیں کابل ایئرپورٹ کو فعال بنانے میں مدد کی پیشکش کی ہے جس پر ہم نے ان کا شکریہ ادا کیا ہے اور انہیں بتایا ہے کہ ہماری پہلی ترجیح اپنا نظام عمل ترتیب دینا ہے۔ ذبیح اللہ مجاہد نے مزید کہا کہ جنرل فیض حمید نے پاک افغان بارڈر کی حفاظت اور جیلوں سے مفرور قیدیوں سے متعلق خدشات کا اظہار کیا۔

ترجمان نے بتایا کہ ڈی جی آئی ایس آئی نے کہا کہ افغان جیلوں سے فرار ہونے والے قیدی جو کہ طالبان کے قبضےکے دوران مفرور ہوئے وہ پاکستانی سالمیت کو نقصان پہنچا سکتے ہیں۔ جواب میں طالبان نے جنرل فیض حمید کو یقین دہانی کرائی کہ افغان سرزمین پاکستان کے خلاف استعمال نہیں ہو گی۔ طالبان نے مزید کہا کہ ہماری سرحد سے پاکستان کے خلاف کسی قسم کی کارروائی نہیں ہو گی۔

یاد رہے کہ ڈی جی آئی ایس آئی جنرل فیض حمید نے 2 روز قبل 4 ستمبر کو افغانستان کا دورہ کیا اور اس دوران انہوں نے طالبان رہنماؤں سے ملاقاتیں گی، اس کے علاوہ ان کی حزب اسلامی کے سربراہ گلبدین حکمت یار سے بھی ملاقات ہوئی تھی۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >