پاکستان نے جن معاملات پر تشویش کا اظہار کیا وہ جائز ہے،ترجمان افغان طالبان

پاکستان نے جن معاملات پر تشویش کا اظہار کیا وہ جائز ہے،ترجمان افغان طالبان

ترجمان افغان طالبان ذبیح اللہ مجاہد نے نیوز کانفرنس کے دوران کہا ہمسایہ ہونے کے ناطے مختلف معاملات پر پاکستان کی تشویش جائز ہے تاہم جن معاملات پر پاکستان کو تشویش ہے انہیں حل کریں گے۔ ہم اپنی سرزمین کو پاکستان کے خلاف استعمال نہیں ہونے دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ہماری خواہش ہے کہ ہمارا ملک بھی سی پیک کا حصہ بنے۔

ترجمان نے کہا افغانستان میں امن کے لیے ہم نے کوششیں کیں، جرگوں اور مذاکرات سے کامیابی نہ ہوئی تو پنجشیر میں طاقت کا استعمال کیا، افغانستان میں کئی جگہوں سے اسلحہ لے کر پنجشیر میں رکھا گیا تھا تاہم اب عام معافی کا اعلان کرتے ہیں اور پنج شیر میں جو اسلحہ ہمارے ہاتھ آیا اس کو محفوظ جگہ پہنچایا جائے گا۔ ہماری خواہش تھی کہ پنجشیر میں لڑائی اور جنگ سے بچیں لیکن ہمیں جواب دینا پڑا۔

ذبیح اللہ مجاہد کا مزید کہنا تھا کہ ہم نئی حکومت کی طرف جائیں گے اور ہمارا مقصد پرامن افغانستان ہوگا، حکومت میں توانا اور اچھے لوگوں کو لائیں گے، افغانستان میں حکومت سازی کے لیے اقدامات مکمل ہیں صرف تکنیکی معاملات زیرغور ہیں۔ پورے افغانستان میں امن اور استحکام ہے، ہم نے خصوصی فورسز تشکیل دی ہیں جو ہر جگہ سرچ آپریشن کریں گی۔

انہوں نے کہا ترکی اور مشرق وسطیٰ کی مدد سے کابل ائیرپورٹ کی بحالی کی کوشش کی جارہی ہے، امید ہے کہ کابل ائیرپورٹ بہت جلد پروازوں کے لیے بحال ہوجائے گا جب کہ کابل میں حالات ٹھیک اور ہمارے کنٹرول میں ہیں۔ افغان عوام افغانستان میں مزید جنگ نہیں چاہتے، دنیا بھر سے اپیل کرتے ہیں کہ افغانستان کی تعمیر و ترقی میں مالی معاونت کریں۔


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>