اشرف غنی نے افغان قوم سے معافی مانگ لی

اشرف غنی نے افغان قوم سے معافی مانگ لی

سابق افغان صدر اشرف غنی نے ملک چھوڑتے وقت لاکھوں امریکی ڈالر ز ساتھ لے جانے سے متعلق الزامات کو مسترد کردیا ہے۔

خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق  لاکھوں ڈالر ہیلی کاپٹر میں بھر کر لے جانے سے متعلق الزامات  کی تردید کرتے ہوئے کہا کہ میری اور اہلیہ کی جائیدادوں سے متعلق تفصیلات پہلے بھی منظر عام پر لائی جاچکی ہیں پھر بھی اس کے باوجود اقوام متحدہ سمیت کسی بھی آزاد ادارے سے آڈٹ کروانے کیلئے تیار ہوں۔

رپورٹ کے مطابق افغانستان چھوڑ کر متحدہ عرب امارات جانے والے سابق افغان صدر نے ملک سے بھاگنے سے متعلق  الزامات پر وضاحت دیتے ہوئے کہا کہ کابل چھوڑنا میری زندگی کا سب سے مشکل فیصلہ تھا، 15 اگست کو صدارتی محل کی سیکیورٹی  نے مجھے یہ کرنے کا مشورہ دیا تھا۔

اشرف غنی نے کہا کہ سیکیورٹی نے فوری طور پر ملک چھوڑنے کا مشورہ دیتے ہوئے کہا تھا کہ اگر میں نے ایسا نہ کیا تو ملک میں 1990  کی طرز پر خانہ جنگی ہوسکتی ہے، سڑکوں پر خوفناک لڑائی ہوسکتی ہے جس میں لاکھوں لوگ مارے جاسکتے ہیں۔

اشرف غنی نے کہا کہ بندوقوں کو خاموش رکھنے اور  60 لاکھ شہریوں کو  محفوظ رکھنے کیلئے میں نے اپنے ساتھیوں کو بتائے بغیر خاموشی سے ملک چھوڑ دیا۔

یادرہے کہ اس سے قبل اشرف غنی نے اپنی متحدہ عرب امارات میں اپنی موجودگی کی تصدیق کرتے ہوئے کہا تھا کہ اگر میں ملک نہ چھوڑتا تو افغانستان دوسرا شام اور یمن بن جاتا جومیں نہیں دیکھ سکتا تھا۔


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>