خواتین کو کرکٹ سمیت جسم کی نمائش والے کھیل کی اجازت نہیں دیں گے:افغان طالبان

آسٹریلوی میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے طالبان کے ثقافتی کمیشن کے نائب سربراہ احمداللہ واثق کا کہنا تھا کہ خواتین کو کرکٹ سمیت کسی بھی ایسے کھیل کی اجازت نہیں دیں گے جس میں ان کا جسم اور چہرہ ڈھکا ہوا نہ ہو۔ خواتین کا کھیلوں میں حصہ لینا نہ تو مناسب ہے نہ ہی ضروری، ہم مخالفین کے ردعمل سے ڈر کر اسلامی اقدار کو پامال نہیں کر سکتے۔

آسٹریلوی میڈیا کے مطابق احمد اللہ واثق نے واضح کیا کہ میرا نہیں خیال کہ خواتین کو کرکٹ کھیلنے کی اجازت دینی چاہیے۔ کیونکہ اس میں خواتین کو ایسی صورتحال کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے جس میں ان کا جسم اور چہرہ ڈھکا ہوا نہیں ہوتا۔ انہوں نے کہا کہ یہ اسلامی تعلیمات کے بالکل خلاف ہے جو کے ناقابل برداشت ہے۔

افغان ثقافتی کمیشن کے نائب سربراہ نے کہا کہ یہ میڈیا کا دور ہے اور تمام لوگ تصاویر اور ویڈیوز دیکھتے ہیں، امارت اسلامی افغانستان خواتین کو کسی ایسے کھیل کی اجازت نہیں دے گی جس میں خواتین کا جسم نمایاں ہو۔

یاد رہے کہ 2 روز قبل طالبان نے امارات اسلامی افغانستان کی عبوری حکومت کا اعلان کیا تھا جس میں ملا محمد حسن اخوند کو افغانستان کا وزیراعظم جبکہ ملا برادر اور عبدالسلام حنفی کو نائب وزرائے اعظم مقرر کیا گیا ہے۔ اعلان کردہ عبوری حکومت میں کوئی خاتون شامل نہیں تھی جس پر یورپی یونین اور دیگر ممالک نے تشویش کا اظہار کیا تھا۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >