"کورونا یہودی سازش نہیں” کے پی پولیس نے عوام کو گمراہ کرنے والوں کی "ٹیونگ” کر دی

خیبر پختونخوا میں دو مولویوں اور ایک اسٹوڈیو مالک نے پشتو میں نظم کے ذریعے عوام کو حکومتی احکامات نا ماننے اور احتیاطی تدابیر نہ اپنانے اور وائرس کو یہودی سازش قرار دے کر اکسانے پر اپنی غلطی کا اعتراف کرتے ہوئے عوام اور ضلعی انتظامیہ سے معافی مانگ لی۔

خیبر پختونخوا کے ضلع بنوں سے تعلق رکھنے والے مولویوں نے اپنی غلطی کا اعتراف کرتے ہوئے اپنے ویڈیو پیغام میں کہا کہ ہمیں نہیں معلوم تھا کہ یہ بیماری اتنی خطرناک اور جان لیوا ہے۔ تاہم اب ہمیں اپنی غلطی کا احساس ہے اور ہم عوام سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ حکومتی احکامات کو بالائے طاق نہ رکھیں بلکہ ان پر پوری طرح سے عمل کرتے ہوئے احتیاطی تدابیر اختیار کریں۔ یہ سب ہم لوگوں کا فرض ہے۔

سوشل میڈیا پر تیزی سے وائرل ہونے والی یہ ویڈیو  سجاد نامی شخص کے اسٹوڈیو میں ریکارڈ کی گئی تھی۔ جس میں بنوں کے رہائشی مولوی عبدالجلیل اور مولوی بلال نے اپنی پشتو نظم میں کرونا وائرس کو مسلمانوں کی مساجد، مدارس اور خانہ کعبہ کو ویران کرنے کی سازش قرار دیتے ہوئے لوگوں کو احتیاطی تدابیر نہ اپنانے پر اکسایا تھا اور اپنے روزمرہ کے معاملات اور ملاقاتیں معمول کے مطابق کرنے پر اکسایا تھا۔

یہ بھی پڑھیں: بنوں میں کرونا وائرس کو یہودی سازش قرار دے کر عوام کو گمراہ کرنے والے گرفتار

بعد ازاں پولیس اور ضلعی انتظامیہ کو مقامی لوگوں کی جانب سے شکایت کی گئی کہ اس نظم کے ذریعے عوام کو گمراہ کر کے ان کی جانوں کو خطرے میں ڈالا جارہا ہے۔ جس پر پولیس اور ضلعی انتظامیہ نے کارروائی کرتے ہوئے ملزمان کو گرفتار کر کے حوالات میں بند کر دیا تھا۔ تاہم اب تینوں ملزمان کی جانب سے عوام اور ضلعی انتظامیہ سے معافی مانگی لی گئی ہے۔


  • 24 گھنٹوں کے دوران 🔥

    View More

    From Our Blogs in last 24 hours 🔥

    View More

    This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept

    >