"کرونا وائرس کی تیاری برطانیہ اور رجسڑی امریکہ میں ہوئی”

تفصیلات کے مطابق اقوام متحدہ میں پاکستان کے سابق مستقل مندوب عبد اللہ حسین ہارون نے کرونا وائرس کے پھیلاؤ کے حوالے سے اپنے ویڈیو پیغام میں دعویٰ کیا ہے کہ کرونا وائرس کو برطانیہ میں تیار کیا گیا جب کہ اس کی رجسٹری امریکہ میں ہوئی۔ سابق مستقل مندوب کی کرونا وائرس کے حوالے سے دعوی کی ویڈیو سوشل میڈیا پر خوب وائرل ہو رہی ہے۔

سابق مستقل مندوب حسین ہارون کا سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والے اپنے ویڈیو پیغام کے آغاز میں کہنا تھا کہ آج کل کرونا وائرس کا موضوع سب سے زیادہ زیر بحث ہے اور میں نے اس موضوع پر اس لیے بات نہیں کی کیونکہ سب ہی اس پر بات کر رہے ہیں جس وجہ سے مجھے اس موضوع پر بولنا مناسب نہیں لگا۔

بعد ازاں اپنے ویڈیو پیغام میں دعوی کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کرونا وائرس کے حوالے سے جو باتیں اہم ہیں وہ کوئی نہیں کر رہا۔ تاہم تمام صورتحال کا جائزہ لینے کے بعد میں یہ عرض کرنا چاہوں گا کہ کرونا وائرس قدرتی طور پر پیدا نہیں ہوا بلکہ اسے لیبارٹری میں بنایا گیا ہے جبکہ  یہ کیمیکل ہتھیار تیار کرنے کے طور پر بہت بڑی سازش کی تیاری کی جا رہی تھی۔

اپنے دعوی میں سابق سفیر حسین ہارون کا کہنا تھا کہ کرونا وائرس کو سینٹر آف کنٹرول ڈیزیز کی اجازت سے برطانیہ کی لیبارٹری میں تیار کیا گیا جس کی رجسٹری امریکہ میں ہوئی تھی۔ اپنے دعوی میں انہوں نے اس بات کی نشاندہی بھی کی کہ امریکہ، چین کی ترقی سے پچھلے کچھ عرصے سے گھبراہٹ کا شکار تھا جس کی وجہ سے امریکہ نے وائرس کو ائیر کینیڈا کے ذریعے چین کے شہر ووہان کی لیبارٹری میں بھیجا جہاں سے یہ پوری دنیا میں پھیلا۔

بعد ازاں انہوں نے کہا کہ کرونا وائرس کو انگلینڈ کے پیرا برائٹ انسٹیٹیوٹ میں تیار کیا گیا جس کی فنڈنگ بل اینڈ ملنڈا گیٹس فاونڈیشن، جان ہاپکنز اور ورلڈ اکنامک فارم نے کی۔ انکا اپنے ویڈیو پیغام میں مزید کہنا تھا کہ جو لوگ دنیا بھر میں گھوم کر یہ دعوی کرتے ہیں کہ ہم آپکی مدد کے لیے آئے ہیں اور آپکی صحت کے لیے فکر مند ہیں تو یہ سب دکھاوے کی باتیں ہیں جبکہ حقیقت اسکے بلکل برعکس ہے۔

پاکستانی سابق سفیر نے اپنے ویڈیو پیغام میں یہ انکشاف بھی کیا کہ 2006 میں امریکہ کی کمپنی نے حکومت سے پیٹنٹ یا منظوری لی۔ جبکہ 2014 میں یہ ظاہر کرنے کے لیے کہ یہ کسی ایک جگہ سے حاصل نہیں کیا گیا تو اس کی ویکسین کی پیٹنٹ ڈالی گئی اور نومبر 2019 میں باقاعدہ طور پر اسکی ویکسین کی تیاری اسرائیل میں بنانی شروع کر دی گئی۔

    Senator (1k + posts)

    عبداللہ ہارون حقایق اور تحقیق کے بعد بات کررہا ہے میں نے ایک اور پی ایچ ڈی ڈاکٹر سے بھی اسی قسم کی بات وائرس کے بالکل شروع میں سنی تھی انہوں نے تو ڈاکٹر کی حیثیت سے یہ بھی بتایا تھا کہ وائرس نیچرل نہیں اس میں جو انسانی دخل اندازی کی گئی ہے وہ ساینسدانوں نے نوٹ کرلی ہے مگر کوی اپنا فیوچر داو پر لگانے کو تیار نہیں

OR comment as anonymous below

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


24 گھنٹوں کے دوران 🔥

View More

From Our Blogs in last 24 hours 🔥

View More