بھارت میں ڈیلیوری بوائےپیدل گھر جاتے ہوئے جاں بحق

بھارت میں کورونا وائرس کے خطرے کے پیش نظر کرفیو کے دوران کھانے کی ڈیلیوری کرنے والاایک شخص دہلی سے آگرہ پیدل سفر کرتے ہوئے ہلاک ہوگیا۔
39 سالہ رنویر سنگھ جو ایک پرائیویٹ ریسٹورینٹ کیلئے ڈیلیوری کا کام کرتا تھا دہلی سے آگرہ 200 کلومیٹر پیدل سفر کرتے ہوئے مدیہہ پردیش کے گاؤں ضلع مورینہ میں واقع اپنے گھرجارہا تھااور راستے میں ہی جاں بحق ہوگیا۔

پولیس کے مطابق رنویر سنگھ نیشنل ہائی وے پر کیلاش موڑ کے قریب گر پڑا جہاں ایک مقامی ہارڈویئر سٹور کا مالک فورا اس کی مدد کو پہنچا، اس نے فورا رنویر کو کارپٹ پر لٹایا، چائے اور بسکٹ پیش کیا، رنویر سینے میں درد کی شکایت کررہا تھا، اس نے اپنے سالے اروند سنگھ کو فون کرکے اپنی حالت سے متعلق بتایا، کچھ دیر میں اس کی سانسیں رکنے لگیں اور اس نے دم توڑ دیا۔

پولیس کے مطابق رنویر لاک ڈاؤن میں کوئی سواری نہ ملنے پر دہلی سے اپنے آبائی علاقے پیدل ہی چل پڑا، 200 کلومیٹر پیدل چلنے سے اسے سینے میں درد اٹھا ہوگا، مرنے سے قبل رنویر نے عینی شاہد کو بتایا تھا کہ اس نے ایک ٹرک سے لفٹ بھی لی تھی، پولیس کے مطابق ہائی وے پر جگہ جگہ پانی اور کھانے کا انتظام کر رکھا ہے رنویر کی موت ایک بدقسمت واقعہ ہے۔

رنویر کے بھائی کا کہنا تھا کہ رنویر تین سال سے دہلی میں کام کرتا تھا، اس کی 2 بیٹیاں اور ایک بیٹاہے، ہم غریب لوگ ہیں ، محنت مزدوری کرکے اپنا پیٹ پالتے ہیں رنویر کی ہلاکت کے بعد ان کے بچےکیسےگزر بسر کریں گے۔

OR comment as anonymous below

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


24 گھنٹوں کے دوران 🔥

View More

From Our Blogs in last 24 hours 🔥

View More