بیویاں لاک ڈاؤن کے دوران شوہروں سے نہ الجھیں،حکومت کی اپنی تجاویز پر عوام سے معافی

ملائیشیا میں کورونا وائرس کے خطرے کے پیش نظر مارچ کے آخرسے لاک ڈاؤن ہے، لاک ڈاؤن کے دوران وزارت خواتین نے سوشل میڈیا پر خواتین کیلئے کچھ تجاویز پیش کیں کہ کس طرح خواتین اس لاک ڈاؤن کے دوران اپنا بہتر کردار ادا کرسکتی ہیں، لیکن حکومت کو اپنی ہی تجاویز گلے پڑ گئیں اور ان تمام پوسٹس کو ڈیلیٹ کرکے قوم سے معافی مانگنی پڑی۔

وزارت خواتین نے خواتین کو لاک ڈاؤن کو موثر بنانے کا اہم ہتھیار قرار دیتے ہوئے انہیں تجاویز دیں کہ وہ اپنے شوہروں کے ساتھ چھوٹی چھوٹی باتوں پر نہ الجھیں اور نہ ان سے لڑیں اور نہ ہی انہیں تنگ کریں، لاک ڈاؤن کے دوران بھی دیدہ زیب لباس پہنیں اور بناؤ سنگھار کریں تاکہ شوہر خوشی خوشی گھر میں اپنا وقت گزاریں اور گھر میں رہنے سے اکتاہٹ کا شکار نہ ہوں۔

وزارت خواتین نے ایک جوڑے کی کپڑے دھونے اور ایک ساتھ سکھانے کی رومانوی تصویر شیئر کرتے ہوئے لکھا کہ بیویاں شوہروں سے چھوٹےچھوٹے مسائل پر نہ الجھیں۔

حکومت کی جانب سے شاد ی شدہ خواتین کیلئے تو تجاویز جاری کی گئیں مگر کنوارے شہریوں اور مردوں کیلئے کوئی تجاویز جاری نہیں کی گئیں جس پر شہریوں نے حکومت کو شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ حکومت گھریلو تشدد کو روکنے کیلئے کیوں تجاویز نہیں دیتی یہ تو صنفی تفریق پر مبنی اقدامات ہیں۔

جس پر حکومت کو اپنی تمام پوسٹس ڈیلیٹ کرنا پڑیں اور قوم سے معافی بھی مانگنا پڑی۔

واضح ہو کہ ملائشیا میں گزشتہ روز تک کورونا سے متاثرہ افراد کی تعداد3 ہزار سے تجاوز کرچکی تھی جبکہ 50 افراد ہلاک بھی ہوچکے ہیں۔

OR comment as anonymous below

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


24 گھنٹوں کے دوران 🔥

View More

From Our Blogs in last 24 hours 🔥

View More