امریکی بائیوٹیک کمپنی میں کورونا ویکسین کا کامیاب تجربہ

کورونا کے ستائے عوام کے لیے خوشی کی خبر آن پہنچی ہے ایسی خبر جس کا پوری دنیا کو شدت سے انتظار تھا، کورونا وائرس سے بالواسطہ یا بلا واسطہ متاثر لوگ اس کے علاج سے متعلق پریشان تھے۔کورونا وائرس کی ویکسین پر پاکستان سمیت دنیا کے متعدد ممالک کام کر رہے تھے۔ کورونا وائرس کا پاکستان میں فی الحال محدود علاقوں میں پلازما کے ذریعے علاج کیا جا رہا ہے۔

امریکی بائیوٹیک کمپنی موڈرنا نے کورونا وائرس کے لیے تجرباتی طور پر ایک ویکسین تیار کر لی جس کا نتیجہ اچھا رہا ہے، یہ ویکسین لگنے کے بعد مریضوں کا مدافعتی نظام پہلے سے بہت بہتر دیکھا گیا ہے موڈرنا کے مطابق جن مریضوں پر چیک کیا گیا ان کا مدافعتی نظام100فیصد صحیح طریقے سے کام کرنے لگا بہ نسبت ان لوگوں کے جو اپنے مضبوط قوت مدافعت کے باعث خود بخود کورونا کو شکست دینے میں کامیاب ہوئے ہیں۔

موڈرنا کمپنی کی جانب سے اس ویکسین کا پہلے بھی تجربہ کیا گیا تھا مگر اب کی بار یہ براہ راست انسانوں پر ٹیسٹ کی گئی اور اس تجربے کو فیز ون ٹرائل کا نام دیا گیا ہے۔ اس فیز میں ابتدائی طور پر25لوگوں کو100ملی لیٹر ویکسین لگائی گئی جس کے کچھ سائیڈایفیکٹ بھی سامنے آئے مگر جن لوگوں میں سائیڈ ایفیکٹ سامنے آئے ان کو دیگر لوگوں سے زیادہ مقدار میں ویکسین لگائی گئی تھی۔ دوسری بار اس ویکسین کا مزید8 لوگوں پر تجربہ کیا گیا جن میں سے صرف ایک مریض کو سائیڈ ایفیکٹ سامنے آئے ہیں۔

اس وقت اس خبر کو عالمی طور پر اچھی اور تسلی بخش خبر تسلیم کیا جا رہا ہے۔مگر موڈرنا نے ایک اور قسم کی ایم آر این اے نام کی ویکسین بھی تیار کی ہے جس سے توقع کی جار ہی ہے کہ یہ ویکسین خود بخود مریضوں میں ایسے پروٹین پیدا کرے گے جو کسی بھی وائرس سے لڑنے میں مددگار ثابت ہوں گے۔

خیال کیا جارہا ہے کہ اگر یہ ویکسین ایک مہینہ پہلے تیار ہوجاتی تو اس سے بڑی تعداد میں لوگوں کی ہونے والی اموات کو روکا جاسکتا تھا۔

OR comment as anonymous below

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


24 گھنٹوں کے دوران 🔥

View More

From Our Blogs in last 24 hours 🔥

View More