جنرل اسپتال لاہور کے آرتھو پیڈک وارڈ کے 18 ڈاکٹرز کرونا کا شکار

لاہورکے جنرل اسپتال میں آرتھوپیڈک وارڈ کے اٹھارہ ڈاکٹرز میں کرونا کی تصدیق ہوگئی ہے،  جس کے بعد ایم ایس جنرل اسپتال نے آرتھوپیڈک وارڈ کو تین روز کے لیے بند کردیا ہے۔ اسپتال انتظامیہ کا کہنا ہے کہ آرتھو پیڈک وارڈ کے طبی عملے اور مریضوں کے کرونا ٹیسٹ کئے جارہے ہیں۔

اسپتال انتظامیہ کے مطابق کرونا کیسز سامنے آنے کے بعد آرتھوپیڈک وارڈ کے سربراہ نے پرنسپل کو خط لکھا ہے جس میں کہا گیا کہ وارڈ کے باقی ڈاکٹرز کو قرنطینہ کردیا گیا ہے،اس لیے آرتھوپیڈک وارڈ کو دس روز کے لیے بند کردیا جائے۔

ایم ایس جنرل اسپتال محمود طارق کا کہنا ہے کہ بڑی تعداد میں کیسز سامنے آنے پر  ابتدائی طور پر وارڈ کو تین  دن کے لیے بند کرکے ڈس انفیکٹ کیاجارہا ہے۔ جس کے بعد وارڈ کو کھولا جائے گا۔اسپتال ذرائع کے مطابق انسٹی ٹیوٹ آف نیورو سائنس کے تین ڈاکٹرز اور دو نرسزمیں بھی کرونا وائرس کی تصدیق ہوگئی ہے۔

صدر پاکستان میڈیکل ایسو سی ایشن ڈاکٹر اشرف نظامی کا کہنا ہے کہ عالمی ادارہ صحت کے مطابق پاکستان میں طبی عملے اور ڈاکٹزر کرونا سے سب سے زیادہ متاثر ہیں۔ اس کے باجود ڈاکٹرز کو حفاظتی کٹس اس طرح سے نہیں مل رہیں جس طرح ملنی چاہئے، پہلے ملتان پھر پاکستان کے دیگر شہروں کے اسپتالوں میں متاثرین سامنے آئے، ہم بار بار کہہ رہے ہیں کہ لاک ڈاون میں نرمی نہیں سختی کی جائے ، نرمی کے نام پر بازاروں میں رش لگادیا ہے، ہمیں کرونا کے ساتھ رہنا ہے لیکن کس طرح رہنا ہے یہ فیصلہ کرنا ہوگا۔ ہم بحران کی طرف بڑھ رہے ہیں، حکومت کو ہوش کے ناخن لینے چاہئے۔

OR comment as anonymous below

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


24 گھنٹوں کے دوران 🔥

View More

From Our Blogs in last 24 hours 🔥

View More