مودی کے گڑھ میں مسلمان تاجر نے اپنے دفتر کو کورونا مریضوں کے لیے ہسپتال بنا دیا

بھارت میں مسلمان تاجر نے اپنے دفتر کو کورونا مریضوں کے لیے ہسپتال بنا دیا

بھارتی ریاست گجرات کے شہر سورت میں کورونا وائرس سے صحتیاب ہونے والے تاجر قادر شیخٰ نے سرکاری ہسپتالوں میں جگہ کی کمی کے پیش نظر اپنے ذاتی دفتر کو85 بستروں پر مشتمل ہسپتال میں تبدیل کر دیا۔

قادر شیخ خود کورونا سے متاثر ہوئے اور 20 روز تک پرائیویٹ ہسپتال میں زیر علاج رہنے کے بعد صحتیاب ہو گئے مگر جب پرائیویٹ ہسپتال انتظامیہ نے ان کو بل دیا تو وہ حیران ہو گئے۔ انہوں نے کہا کہ مجھے احساس ہوا کہ سرکاری ہسپتالوں میں جگہ نہیں ہے اور پرائیویٹ ہسپتالوں میں علاج کرانے کی غریب آدمی میں سکت نہیں۔

اس کے بعد قادر شیخ نے 30 ہزار مربع فٹ پر محیط اپنے دفتر کو ہی 85 بستروں پر مشتمل ہسپتال میں تبدیل کر دیا۔ انہوں نے اس ہسپتال میں ڈاکٹرز اور طبی عملے کا بھی خود ہی انتظام کیا ہے تاہم یہاں ادویات اور دیگر طبی سہولیات حکومت کی جانب سے دی جا رہی ہیں۔ تاہم قادر شیخ کے مطابق ہسپتال کے یوٹیلٹی بلز انہی کے ذمے ہیں۔

واضح رہے کہ بھارت میں کورونا وائرس سے متاثر ہونے والوں کی تعداد 15 لاکھ سے تجاوز کر گئی ہے اور 35 ہزار سے زائد افراد اس مہلک وائرس سے ہلاک ہو چکے ہیں جس کی وجہ بھارت دنیا بھر میں کورونا وائرس سے متاثر ہونے والا تیسرا بڑا ملک بن گیا ہے۔


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>