کورونا بھارت سے دنیا بھر میں پھیلا، چینی سائنسدان کا دعویٰ

کورونا بھارت سے دنیا بھر میں پھیلا، چینی سائنسدان کا دعویٰ

کورونا وائرس چین کے شہر ووہان سے نہیں بلکہ بھارت سے شروع ہوا، چینی سائنسدانوں نے دعویٰ کردیا،ڈیلی میل کی رپورٹ کے مطابق چین کی اکیڈمی آف سائنسز کے سائنس دانوں کی ٹیم کا کہنا ہے کہ ممکنہ طور کورونا ر پر کورونا وائرس دوہزار انیس میں موسم گرما میں بھارت میں پیدا ہوا تھا، بھارت سے چین کے شہر ووہان پہنچا جہاں اس کی پہلی بار شناخت ہوئی۔

سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ کورونا بندر سمیت دیگر جنگلی جانوروں کے ذریعے گندے پانی سے انسانوں تک پہنچا،چینی سائنس دانوں کا کہنا تھا کہ بھارت کے خراب نظام صحت کی وجہ سے کورونا کئی مہینوں تک بغیر کسی تشخیص کے لوگوں کو متاثر کرتا رہا، انڈیا کے صحت کے خراب نظام اور نوجوان آبادی کی وجہ سے کورونا وائرس کئی مہینوں تک بغیرلوگوں کو متاثر کرتا رہا ہے۔

سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ ووہان میں کورونا کی شناخت سے قبل یورپ سمیت دیگر ممالک میں پھیل چکا تھا،بھارت میں گزشتہ چوبیس گھنٹے کے دوران مزید چالیس ہزارکیسزرپورٹ ہوئے، متاثرین کی تعداد تیرانوے لاکھ تیرانوے ہزار سے تجاوز کرگئی، جبکہ ایک لاکھ چھتیس ہزار سات سو تینتس افراد ہلاک ہوچکے ہیں، بھارت کورونا سے متاثر ہونے والا دوسرا بڑاملک ہے۔

دوسرے ممالک کے سائنس دانوں نے چینی سائنس دانوں کے اس دعوے کی تردید کی ہے۔ برطانیہ میں گلاسگو یونیورسٹی کے ماہر ڈیوڈ رابرٹسن نے کہا ہے کہ چینی سائنس دانوں کی تحقیق ناقص ہے اور اس سے کورونا وائرس سے متعلق معلومات میں اضافہ نہیں ہوتا ہے،عالمی ادارۂ صحت چین میں کورونا وائرس کا ذریعہ تلاش کرنے کی کوشش کر رہا ہے، ڈبلیو ایچ او نے اس کے لیے ایک تحقیقاتی ٹیم چین بھیجی ہے۔

دوسری جانب امریکا چین پر کورونا پھیلانے کا الزام لگاتا رہا،جس کی چین تردید کرچکا ہے، چین میں 86,512 افراد متاثر اور 4,634 اموات ہوچکی ہیں۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >