تاجر برادری نے حکومت سندھ کے لاک ڈاؤن کے فیصلے کو مسترد کردیا

تاجر برادری نے حکومت سندھ کے لاک ڈاؤن کے فیصلے کو مسترد کردیا

کراچی کے تاجران نے حکومت سندھ کے لاک ڈاؤن کے فیصلے کو مسترد کرتے ہوئے نظر ثانی کا مطالبہ کیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق آل پاکستان انجمن تاجران کے صدر اجمل بلوچ نے سندھ حکومت کے فیصلے کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ کراچی شہر ملک کا کاروباری حب ہے جبکہ یہاں مکمل لاک ڈاؤن سے پورے ملک پر پڑے گا۔

اجمل بلوچ کا کہنا تھا کہ لاک ڈاؤن لگا کر تاجر برادری کو مشکلات میں نہ ڈالا جائے، تاجر برادری کو معاشی طور پر کمزور کرنا ملک کو کمزور کرنے کے مترادف ہے۔

اجمل بلوچ نے مزید کہا کہ سندھ حکومت کورونا وائرس کے باعث بگڑتی ہوئی صورتحال پر قابو پانے میں ناکام رہی ہے، صوبائی حکومت اس ناکامی کو چھپانے کے لئے تاجروں پر ظلم نہ کرے۔

انہوں نے سندھ حکومت سے ہنگامی بنیادوں پر تمام تاجروں کی ویکسینیشن کا عمل مکمل کرنے کا مطالبہ بھی کیا ہے۔

دوسری جانب فیڈریشن آف پاکستان چیمبرز آف کامرس اینڈ انڈسٹری (ایف پی سی سی آئی) نے سندھ حکومت سے لاک ڈاؤن کے فیصلے کو مسترد کرتے ہوئے نظر ثانی کا مطالبہ کیا ہے۔ایف پی سی سی آئی کے صدر ناصر مگوں نے کہا کہ انڈسٹر ی کو ہفتے میں سات دن کھلا رکھنےکی اجازت ہونی چاہیئے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ویکسینیشن کا عمل مکمل کیا جائے، کاروبار اور معاشی سرگرمیوں کی اجازت دی جائے، صنعتوں اور کاروبار کوتالا لگا تو ملازمین کو تنخواہیں ادا نہیں کی جاسکیں گی۔

واضح رہے کہ سندھ حکومت نے کورونا کی بگڑتی ہوئی صورتحال کے پیش نظر صوبے بھر میں لاک ڈاؤن نافذ کرنے کا فیصلہ کیا ہے جس کا اطلاق کل سے 8 اگست تک ہوگا۔

ترجمان کےمطابق لاک ڈاؤن کے دوران صوبے کی تمام مارکیٹیں بند رہیں گی اور انٹر سٹی ٹرانسپورٹ کو بھی بند رکھا جائے گا جب کہ ایکسپورٹ انڈسٹری اور صوبے کے تمام میڈیکل اسٹورز کھلے رہیں گے۔

ترجمان نے بتایا کہ آئندہ ہفتے سے سرکاری دفاتر بند کر دیے جائیں گے اور نجی دفاتر کو بند رکھا جائے گا جب کہ بغیر کسی وجہ کے لوگوں کے باہر نکلنے پر پابندی ہوگی۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >