سفیر کی بیٹی کا قتل،بااثر بزنس مین کے بیٹے کو کون ذہنی مریض ثابت کرنا چاہتا ہے؟

سابق سفیر کی بیٹی کا قتل،بااثر بزنس مین کے بیٹے کو کون ذہنی مریض ثابت کرنا چاہتا ہے؟

وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کے علاقے سیکٹر ایف7 میں سابق سفارتکار شوکت مقدم کی بیٹی نورمقدم کے قتل کے الزام میں گرفتار ملزم ظاہر جعفر جو کہ بااثر کاروباری شخصیت کا بیٹا ہے اسے اب ایک مخصوص طبقے کی جانب سے سوشل میڈیا پر ذہنی بیمار قرار دیا جا رہا ہے۔

سوال ہے کہ کیا قتل کے الزام کے نتیجے میں ملزم کو ملنے والی سخت سزا سے بچانے کے لیے یہ سب کیا جا رہا ہے؟ یہ کون لوگ ہیں ان کا ایجنڈا کیا ہے جو ایک قاتل کو بیمار قرار دے کر اسے سخت سزا سے بچانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

سوشل میڈیا پر ایسا رویہ سامنے آنے پر کچھ صارفین نے برہمی کا اظہار کیا ہے کہ آخر کیوں کوئی کوشش کر رہا ہے کہ ایک قاتل کو ذہنی بیمار شخص قرار دے کر اسے سخت سزا سے بچایا جائے۔ زہرہ حیدر نامی صارف نے کہا کہ قتل کے الزام کے بعد اس کی بیماری کو بنیاد بنانا غلط اور بے معنی ہے۔ اس سے فرق نہیں پڑتا کہ اس نے جذباتی ہو کر اقدام اٹھایا آخر کار اس کا جرم بہت بڑا ہے۔

انہوں نے کہا کہ وہ ایک مجرم ہے جو کہ جرم کرنے کے بعد ملک چھوڑ کر فرار ہونے والا تھا مگر اسے پکڑ لیا گیا ہے۔

ایک صارف نے کہا کہ بالکل کسی کی بیماری کو انصاف کی راہ میں رکاوٹ نہیں بننا چاہیے۔ دماغی حالت بالکل اسی طرح اہمیت کی حامل ہے جس طرح ظاہری۔ اس صارف نے کہا کہ جس طرح شوگر کے مریض کو کسی جرم کی سزا سے معافی نہیں ملتی اسی طرح ذہنی بیمار شخص کو بھی اس سزا سے نہیں بچنا چاہیے کیونکہ وہ بھی تو ایک بیماری ہی ہے۔

اداکار عثمان خالد بٹ نے کہا کہ اس کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ میں ہونا چاہیے۔

علشباابرار نے کہا کہ اگرچہ ملزم اپنے بااثر خاندان کی وجہ سے ضمانت کرانے میں کامیاب ہو گیا ہے مگر ان کی کوشش ہے کہ وہ اسلام آباد ایئرپورٹ پر کھڑی ہوں تاکہ ظاہر جعفر کو باہر جانے سے روکا جا سکے۔ انہوں نے کہا کہ شہریوں کی ذمہ داری ہے ایئرپورٹ کے باہر احتجاج کریں تاکہ ظاہر جعفر ملک سے فرار نہ ہو سکے۔

عمر نامی صارف نے کہا کہ وہ حیران ہیں کچھ لوگ ظاہر جعفر کو پاگل ثابت کر کے اسے سزا سے بچانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ آپ کو پتہ ہونا چاہیے کہ ذاتی انا اور غصہ کوئی پاگل پن کی علامتیں نہیں ہوتیں۔ ہمیں ایسی توجیہات سے بچنےکی ضرورت ہے۔

دوسری جانب قتل کے حوالے سے مزید ہولناک تفصیلات سامنے آ رہی ہیں اور موقع پر پہنچنے والے تھراپی ورکس نامی تنظیم کے ارکان اور نور مقدم کے دوستوں نے پولیس کو بیان ریکارڈ کرائے ہیں۔ نور مقدم کا گلا کاٹ کر قتل کرنے کے کیس میں نامزد ملزم کو دو روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کیا ہے۔

عید کے پہلے روز پولیس نے ملزم ظاہر جعفر کو اسلام آباد کے ڈیوٹی مجسٹریٹ کی عدالت میں پیش کیا اور چھ روزہ جسمانی ریمانڈ کی استددعا کی۔ تاہم عدالت نے ملزم کو دو روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کی تحویل میں دیا۔

کوہسار پولیس کے مطابق گزشتہ روز واقعہ کی اطلاع ملتے ہی پولیس موقع پر پہنچ کر ایک شخص کو گرفتار کیا تھا۔ پولیس کے مطابق قتل کی اطلاع ایک سکیورٹی گارڈ نے دی تھی۔ پولیس نے منگل کی رات کو لڑکی کے والد شوکت مقدم کی مدعیت میں ظاہرجعفر نامی ملزم کے خلاف ایف آئی آر درج کی تھی۔

ادھر وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے شوکت مقدم سے فون پر رابطہ کیا ان کی بیٹی کے بیہمانہ قتل پر دکھ اور افسوس کا اظہار کیا اور حکومت کی جانب سے ہر ممکن تعاون کا یقین دلایا ہے۔

  • کیا وزیرِ خارجہ محترم کسی غریب کی بیٹی کے قتل پر ایسے حرکت میں آتے ھیں یا صرف مالدار طبقہ کی خدمت بجا لانا ہی انکے فرائض میں شامل ہے

  • ملزم بااثر خاندان سے ہے اور قوی امکان ہے کہ وہ سرکاری وکیل اور جج کو تابع کر لیں گے۔۔۔۔ویسے بھی سنا ہے کہ وہ امریکی شہری بھی ہے۔۔۔۔۔
    پولیس اور وزراء کی یہ میڈیا ڈرامہ بازی اس کیس کے حوالے سے چند دن اور چلنے کے بعد ختم ہو جائے گی۔
    عوام بھی ان اداکاروں کے رٹے رٹاے بیانات پر خوش ہو جاتی ہے۔۔۔۔

  • اگر یہ ذہنی مریض ہوتا تو ایک پڑھی لکھی ہوشمند اچھے خاندانی بیک گراونڈ کی لڑکی اس کے ساتھ رات کو کیوں چلی آتی؟
    جو قتل ہوگئی اس کا حساب اوپر ہوگا مگر جس نے قتل کیا اس کا حساب تو لیں

  • وہ سابقہ سفیر کی بیٹی تھی یہ بد بخت با اثر بزنس مین کا بیٹا 🤔پٹواری کی ماں مرجاۓ تو جنازے میں بہت لوگ شامل ہونگے اگر پٹواری خود تو اتنا جنازہ نہی بھرے گا

  • یہ بندہ خود ایک نفسیاتی ڈاکٹر ہے اور باقائدہ۔ ایک ادارہ چلا رہا ہے اور کیسا نفسیاتی مریضوں والا کام کیا اس بدبخت نے

  • If he was mentally unstable then did his parents get him help before the murder happened? Did they know he was dangerous to others? Did the family of the murderer make it known to others that their son is mentally unstable? After the fact mental health problems are concoctions.

  • اگر ذہنی توازن ٹھیک نہیں تو عمر قید کی سزا مینٹل اسائلم میں دیدو پاکستان میں پاگل خانے تو ہونگے اس کو پاگل خانے میں۔ عمر قید کردو


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >