بھارت سے چینی اور کپاس کی درآمدکی تجویز مسترد، پاکستان نے بھارت کو جھکاوا دیا؟

بھارت سے چینی اور کپاس کی درآمد کی پہلے تجویز اور کابینہ میں مسترد۔۔ پاکستان نے بھارت کو جھکاوا دیا؟ بھارتی میڈیا اور پاکستان میں بھارت کے ہمدرد سیخ پا کیوں؟

وفاقی کابینہ نے بھارت سے چینی اور کپاس درآمد کرنے کی تجویز مسترد کردی۔ ای سی سی نے بھارت سے چینی اور کپاس منگوانے کی تجویز پیش کی تھی۔

یہاں سوال یہ اٹھتا ہے کہ کیا واقعی پاکستان بھارت سے چینی اور کپاس درآمد کرنے میں سنجیدہ تھا؟ اسکا احوال کابینہ کی اندرونی کہانی نے بتادیا جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ پاکستان نے بھارت کو ڈاج دیا ہے۔

وفاقی وزیر خزانہ حماداظہر نے کابینہ اجلاس میں جب بھارت سے چینی اور کپاس درآمد کرنے کی تجویز پیش کی تو وزیراعظم عمران خان نے سوال کیا کہ یہ سمری کیوں پیش کی؟ جس پر حماداظہر نے جواب دیا کہ آپ نے ہی 2 ہفتے قبل حکم دیا تھا۔

حماداظہر کے اس جواب پر وزیراعظم عمران خان لاجواب ہوگئے اور کابینہ نے حماداظہر کی تجویز یہ کہہ کر موخر کردی کہ بھارت کشمیریوں پر بہت ظلم کررہا ہے، وہ جب تک مقبوضہ کشمیر میں آرٹیکل 370 اے واپس نہیں لے گا تب تک ہم بھارت سے تجارت نہیں کرسکتے۔

حماداظہر کے جواب پر وفاقی وزراء نے حماداظہر کو شاباشی دی، جو وزراء اس سمری کی مخالفت کرنا چاہتے تھے ان سے پہلے ہی وزیراعظم عمران خان نے یہ سمری موخرکردی اور جواز کشمیریوں پر مظالم اور آرٹیکل 370 اے کو بنایا۔

بھارت سے چینی اور کپاس درآمد کرنے کی تجویز مسترد ہونے پر بھارت آگ بگولہ ہوگیا اور بھارتی میڈیا اسے یوٹرن قرار دے رہا ہے لیکن حقیقت یہ تھی کہ پاکستان نے بھارت کو ڈاج دیا ہے کہ پہلے بھارت سے تجارت کی خبریں میڈیا کے ذریعے پھیلائیں پھر حماداظہر کی مدد سے ای سی سی کے ذریعے یہ تجویز رکھوائی اور پھر خود ہی مسترد کردی۔

دلچسپ امر یہ ہے کہ حماداظہر کہتے ہیں کہ انہیں دو ہفتے قبل وزیراعظم عمران خان نے بھارت سے چینی اور کپاس درآمد کرنے کا حکم دیا ہے، دو ہفتے قبل نہ تو حماداظہر وزیرخزانہ تھے اور نہ ہی ای سی سی کے سربراہ۔۔ وزیرخزانہ اور ای سی سی کے سربراہ تو حفیظ شیخ تھے جنہیں کچھ روز قبل ہٹاکر حماداظہر کو وزیرخزانہ بنایا تھا۔

دوسری دلچسپ بات یہ ہے کہ وزیراعظم عمران خان نے بھی حماداظہر کو نہیں جھٹلایا بلکہ الٹا یہ ظاہر کیا کہ وہ حماداظہر سے لاجواب ہوگئے ہیں جو غالبا ایک ملی بھگت تھی۔

یہی وجہ ہے کہ اگر آپ بھارتی میڈیا کو دیکھیں، خود کو لبرلز کہنےو الے پاکستانیوں کو دیکھیں تو وہ اسے یوٹرن قرار دے رہے تھے ،تاثر یہ بھی جارہا ہے کہ وزیراعظم عمران خان نے صرف بھارت ہی نہیں مسلم لیگ ن سے بھی ہاتھ کیا تھا جس نے یہ فیصلہ کررکھا تھا کہ اگر کابینہ بھارت سے تجارت کی منظوری دیتی ہے تو وہ اسے میڈیا اور عوام میں استعمال کریں گے۔

بھارت کیساتھ پاکستان نے جو کیا ہے، اس پر یہ کلپ دیکھئے اور انجوائے کیجئے


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >