سرخ قالین،ائیر چیف کا آبائی علاقے کا دورہ اور سوشل میڈیا پر تبصرے !

سرخ قالین ائیر چیف کا دورہ اور سوشل میڈیا پہ تبصرے !

کچھ روز قبل سپوت گجرات پاک فضائیہ کے سربراہ ائیر مارشل ظہیر بابر سدھو اپنے منصب کا حلف اٹھانے کے بعد پہلی مرتبہ آبائی گاؤں سدھ تشریف لائے جہاں انہوں نے اپنے بزرگوں کی مرقد پہ حاضری دی اور کچھ دیر اپنے گاؤں میں قیام پذیر رہے۔

گاؤں میں بنے ہیلی پیڈ پہ لینڈ کرتا ہیلی کاپٹر ، کچے راستوں پہ بچھائے گئے سرخ قالین استقبال کے لئے کھڑی شاندار لینڈ کروز جب یہ سارے مناظر تصاویر یا ویڈیوز کی صورت وائرل ہوئے تو سوشل میڈیا پہ تنقید شروع ہو گئی اور آج بی بی سی نے بھی اس پہ ایک رپورٹ دے ماری۔

زور اس بات پہ دیا جا رہا ہے کہ سیاستدانوں پر تبرے کسنے والے سرکاری ملازموں کی شاہ خرچیاں۔۔۔ اس طرح فوج کے خلاف پہلے سے بغض سے بھرے بیٹھے دانشوروں کو بھی خوب موقع مل گیا کہ وہ بھی اپنے دل کا غبار نکالیں۔

اسی شام مجھے بھی ایک کال موصول ہوئی جو پاک فضائیہ کے سرکاری ترجمان کی تھی کہنے لگے آپ نے اپنے پیج ” کوٹلہ نیوز اینڈ ویوز ” پہ ائیر مارشل کے وزٹ کی ویڈیوز اپ لوڈ کر رکھی ہیں جو کہ سیکیورٹی نقطہ نظر سے غلط ہے آپ انہیں ڈیلیٹ کر دیں۔

بصد ادب میں نے گذارش کی کہ جناب پہلی تو بات یہ ہے کہ میرے کسی پیج پہ ایسی کوئی ویڈیوز وائرل نہیں ہوئیں دوسرا یہ کہ صحافتی اقدار کا بخوبی علم ہے کہ کونسا content پبلک فورم پہ شئیر کرنا ہے یا نہیں آپ کو غلط فہمی ہوئی ہے پھر وہ کہنے لگے کوٹلہ سے جن صحافیوں نے شئیر کی تھیں ان سے کہہ دیا ہے کہ وہ ان ویڈیوز کو ہٹا دیں۔

بی بی سی نے اپنی رپورٹ میں ذکر کیا ہے کہ جب ائیر مارشل ہیلی کاپٹر سے باہر آئے تو انہوں نے ویڈیوز بنانے سے منع کیا اور BBC کا یہ بھی کہنا تھا کہ اس بارے ائیر فورس سے موقف مانگا گیا مگر نہ ملا۔

سوشل میڈیا پہ جاری تنقید کے مرکزی پہلو یہ ہیں
1۔ اپنے گاوں آنے کے لئے ایسا پروٹوکول ضروری نہ تھا
2۔ نجی دورہ تھا تو سرکاری وسائل کا استعمال کیوں
3۔ دو قدم بھی پیدل نہ چل پائے

ابھی تک اس تنقید یا اٹھنے والے سوالوں کا باضابطہ جواب سامنے نہیں آیا لیکن گمان کیا جا سکتا ہے کہ سیکیورٹی کو مدنظر رکھ کر ان کی آمد کا ایسا انتظام کیا گیا اور ائیر مارشل کی گوناں گوں مصروفیات دیکھتے ہوئے وقت بچانے کی خاطر ہیلی کاپٹر پہ آنے کا فیصلہ ہوا مزید یہ کہ اگر وہ اسلام آباد سے سڑک کے راستے آتے تو مسافروں اور شہریوں کو اس وجہ سے لگائے جانے والے روٹس کے باعث دقت کا سامنا ہوتا اس سے بچنے کی خاطر فضائی سفر کا آپشن اختیار کیا گیا۔

سرخ قالین ائیر چیف کا دورہ اور سوشل میڈیا پہ تبصرے !

ہمارے دیہاتی کلچر کا خاصہ ہے کہ ہمارا کوئی عزیز اونچے منصب پہ فائز ہو جائے تو ہم اس کا ششکا اور رعب شریکوں کو دکھانا چاہتے ہیں اور بسا اوقات اپنے قریبی رفقاء کی "معصومانہ فرمائش ” کے سامنے بھی ہتھیار ڈالنے پڑتے ہیں یہ بھی ممکن ہے چیف صاحب تو سادگی سے اپنے باپ دادا کی قبروں پہ فاتحہ کے لئے آنا چاہتے ہوں مگر ” لگدیاں ” نے خاص طور پر اس پروٹوکول کی فرمائش کی ہو۔

یہ بھی ممکن ہے کہ ائیر مارشل ایسا پروٹوکول سرے سے چاہتے ہی نہ ہوں مگر گجرات کی سول انتظامیہ نے شاہ سے زیادہ شاہ کی وفاداری دکھانے کی خواہش میں یہ سب کر ڈالا ہو لیکن اب تنقید کے پتھروں کی زد پہ تو ائیر مارشل ہیں۔

سرخ قالین ائیر چیف کا دورہ اور سوشل میڈیا پہ تبصرے !

اب جو منظر نامہ ابھرا ہے کہ اپنے آبائی گاوں آنے پر ہی اتنی تنقید کی جا رہی ہے تو میرے نزدیک اس میں چیف صاحب کی میڈیا ٹیم اور ہیلی پیڈ کی سیکیورٹی کے نگران کے بیچ عدم تعاون کا فقدان زیادہ تھا۔ جب طے تھا کہ چیف کا یہ وزٹ خالصتاً ذاتی نوعیت کا ہے اور اس کی کوریج کی اجازت نہیں تو پھر پہلے سے یہ ہدایات جاری کیوں نہ کی گئیں کہ ہیلی پیڈ سے مزار تک استقبال کے لئے آنے والے افراد کو تصاویر یا ویڈیوز بنانے کی اجازت نہ ہو گی۔

خبر ہے کہ ہیلی کاپٹر لینڈ کرنے سے قبل سیکیورٹی اہلکار وہاں موجود میڈیا والوں کو کوریج سے منع کرتے رہے لیکن سوال موجود ہے کہ لینڈ کرتے ہوئے طیارے کی ویڈیوز کس نے بنائیں اور اگر بناتے ہوئے اسے دیکھ لیا گیا تو اسی وقت ڈیلیٹ کیوں نہ کرا دی گئیں۔

سرخ قالین ائیر چیف کا دورہ اور سوشل میڈیا پہ تبصرے !

بعد میں کیوں یہ نوبت آئی کہ ایک ایک صحافی کو کہہ کر مواد ڈیلیٹ کروانا پڑا لیکن تب تک دیر ہو چکی تھی۔ ائیر مارشل کی سیکیورٹی ٹیم کو اس سراسر غفلت اور کوتاہی کا نوٹس لینا ہو گا ان کی ذرا سی بد انتظامی کے باعث اب جو سبکی ہو رہی ہے اس کا ازالہ ممکن نہیں۔ جس کسی نے بھی یہ ویڈیوز بنا کے سوشل میڈیا پر وائرل کیں اس نے ائیر مارشل کے حق میں کچھ بھی اچھا نہیں کیا۔

کیا ہی اچھا ہوتا جناب ائیر مارشل کھاریاں کینٹ میں لینڈ کرتے وہاں سے پاک فوج کے دفاعی حصار میں عزت و آبرو کے ساتھ محض سات آٹھ کلومیٹر کا سفر سڑک کے راستے طے کرتے اور آبائی گاؤں پہنچ جاتے۔ اس طرح نہ لینڈ کروزر گاڑیوں اور سرخ قالین پہ سوال اٹھتے نہ ہی ایک باوقار ادارے کی ناموس پہ انگلیاں اور یقین جانیں اس سے ظہیر احمد بابر کا وقار بھی بڑھتا۔۔۔ اب جتنے منہ ہیں اتنی باتیں۔

سرخ قالین ائیر چیف کا دورہ اور سوشل میڈیا پہ تبصرے !

فرصت ملے تو ائیر چیف ٹھنڈے دل سے اپنے اس وزٹ کے مجموعی انتظامات بارے ایک غیر جانبدارانہ انکوائری ضرور کرائیں اور جائزہ لیں کہ کہاں کہاں غلطی ہوئی تاکہ آئندہ یہ نوبت نہ آئے۔ کسی کو خوش کرتے کرتے اپنی نیک نامی اور عمر بھر کی ریاضت کو یوں داو پہ لگا دینا کوئی دانشمندی نہیں اور جناب آپ کی ذات کی بات ہوتی تو ہم چپ رہتے یہ تو سوال ہے آپ کے ادارے کی آبرو کا ایک ایسا ادارہ جو شاندار روایات کا امین ہے۔

اے طائر لاہوتی اس رزق سے موت اچھی
جس رزق سے آتی ہو پرواز میں کوتاہی

    • بے شک رانا جی یہ سچ ہے کہ بی بی سی انڈین اور یہود کے پے رول پر پر ہے۔ مگر اس ائير چیف کو کیا آخر آئی ہوئی تھی کے لال کارپٹ کے بغیر اس کا ذاتی دورا بھی ممکن نہیں؟ اور پھر میلٹری ہیلی کاپٹر۔ جس مٹی پر یہ کھیل کود کر بڑا ہوا ہے آج اسی مٹی سے جوتے گندے ہونے کے خدشے سے کارپٹ پر چل رہا ہے۔ اور یا پھر اس عمل کا سارا مقصد صرف اور صرف اپنے گاؤں والوں کواپنے ٹور دکھانا ہے؟

  • بی بی سی والے حرامیوں کو اس ہیلی کاپٹر کی مشہورِ زمانہ تصویر نہیں ملی جس میں نہاری کی دیگیں کھوتی شریف حرام خور کے لیے لوڈ ہو رہی ہیں

  • اسی لئے ہم انڈیا کا مقابلہ کرنے کی بجاے ان سے امن کی بھیک مانگتے ہیں ہمارے جنرل اور ائرمارشلز چار قدم دھول مٹی میں چلنے سے گھبراتے ہیں

    • acha ji. Abhinandan ko apne ghulail mar k nichay utara tha?

      I dont support such ShahKharchi of Civilians and military people lekin ap bhi apni bat me tawazun banain. bilawaja ki batain na karain.

  • جنہوں نے یہ کارپیٹ بچھایا اور اس کا احتمام کیا انہیں پکڑیں
    چیف نے تو نہیں کہا ہو گا کہ سرخ قالین بچھاؤ
    لوگوں کو خوامخواہ کی تنقید کے لیے بس بہانہ چاہیے

  • جو سارے سول اداروں کو برباد کرنے والوں اور
    ملک کو لوٹنے والوں پر پھول پھنکتے ہیں انہیں ایک دم
    ایک قالین نظر انے لگتا ہے؟
    یہ ایک پرپگنڈہ ہے پاکستانی عوام اور افواج کے خلاف

    جبکہ حقیقت یہ ہے کہ یہ دنیا کے کام ترین بجٹ والی
    بہترین فورس ہے-

  • یہ سارے اکاؤنٹ ووہی ہیں جو ٤٥ کروڑ کی چوری کی
    گھڑی پر تو لکس بھیجتے ہیں لیکن دنیا کی ٦ بڑی فورس کے چیف
    کی ایسکورٹ پر بک بک کر رہے ہیں
    آج ان چوروں کو چھوڑ دو یہ یہی قالین چاٹ لیں گے بلکہ کھا لیں گے

  • Oh meray watan kay saaday logo…….pind wich jaahj ya helicopter na utra tau khaak tohr banay gee……paindoo ppl like to show off and show their tehka to other quams resident in the village…..must have been on insistence of biradri….

  • ائر چیف کے اس عمل پر تنقید بالکل بجا ہے تاکہ وہ اپنا آئندہ کا طرز عمل سیدھا کرے مگر اس واقعے کی آڑ میں افواج پر اپنے چھپی ہوئی اندرونی خباثت کو ظاہر کرنے والے مینڈک پھدک پھدک کر پاگل ہو رہے ہیں . حوصلہ رکھو . سرخ کارپٹ کی آڑ میں اپنا زہریلا پروپگنڈہ بند کرو . آجکل گھروں میں عام سے موقع پر اس سے کئی گنا زیادہ اہتمام کیا جاتا ہے .


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >