بلوچستان: اسٹنٹ کمشنر کو بچوں سمیت دودھ دہی کی دکان کو سیل کرنا مہنگا پڑا گیا

حکم عدولی کی سزا، اسسٹنٹ کمشنر نے بچوں کو دکان میں بند کر دیا، اپنا بھی تبادلہ کروا بیٹھا ، حکومت بلوچستان کا نوٹس، بچوں کو دکان میں بند کرنا مہنگا پڑ گیا

تفصیلات کے مطابق حکومت بلوچستان نے بچوں کو دکان میں بند کرنے والے اسسٹنٹ کمشنر کا تبادلہ کر دیا۔

پولیس کے مطابق بلوچستان کے بولان کے علاقے بھاگ میں 7 اور 8 سالہ دو بھائی سجاد احمد اور جواد احمد دوکان پر دودھ اور دہی فروخت کررہے تھے، اس دوران اسٹنٹ کمشنر نے لاک ڈاؤن کی خلاف ورزی پر ان کی دکان بند کرانا چاہی تو بچوں نے بتایا کہ لاک ڈاؤن کا اطلاق دودھ اور دہی کی دکان پر نہیں ہوتا ہے، انہوں نے دکان کو بچوں سمیت سیل کردیا۔

ایک ویڈیو سامنے آئی ہے جس میں دیکھا جا سکتا ہے کہ بچوں کی دکان کے اندر سے رونے کی آواز آ رہی ہے

جس پر بچے ڈھائی گھنٹے تک روتے اور چلاتے رہے ، عوام کے احتجاج پر مقامی پولیس نے تالے توڑ کر بچوں کو دکان سے باہر نکالا، حکومت بلوچستان نے نوٹس لیتے ہوئے اسٹنٹ کمشنر بھاگ عبدالمجید کا تبادلہ کرکے انہیں محکمہ نظم ونسق میں رپورٹ کی ہدایت کردی۔

OR comment as anonymous below

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


24 گھنٹوں کے دوران 🔥

View More

From Our Blogs in last 24 hours 🔥

View More