لاش نمبر 112: پی آئی اے کے طیارہ حادثے میں جاں بحق ہونے والے احمد مجتبیٰ کی لاش کا معمہ

لاش نمبر 112: پی آئی اے کے طیارہ حادثے میں جاں بحق ہونے والے احمد مجتبیٰ کی لاش کا معمہ

کراچی میں حادثے کے نتیجے میں تباہ ہونے والی پرواز پی کے8303 میں سوار احمد مجتبیٰ کی لاش کا ابھی تک کوئی پتہ نہ چل سکا، ان کی اہلیہ کے مطابق وہ پیشے کے لحاظ سے مکینیکل انجینئر تھے ان کے 3 بچے ہیں سب سے بڑا بیٹاانس 10 سال کا ہے، اس کے بعد منجھلا بیٹا آیان ہے اس کی عمر8 برس ہے جبکہ سب سے چھوٹی بیٹی کا نام آمنہ ہے جو کہ ابھی3 سال کی ہے۔

لاپتہ احمد مجتبیٰ کی بیوی نے بے بسی کے عالم میں کہا کہ ان کا صرف یہ مطالبہ ہے کہ کم از کم ان کو یہ بتادیا جائے کہ ان کے شوہر کی قبر کہاں پر ہے کیونکہ جب بچے پوچھیں گے کہ ان کے والد کی قبر کہاں ہے تو وہ ان کو کیا جواب دیں گی۔

انہوں نے بتایا کہ سب سے پہلے کراچی یونیورسٹی کو ڈی این اے کے لیے سیمپل بھجوایا تھا جس کا نتیجہ موصول نہیں ہوا تھا پھر انہوں نے لاہور میں پنجاب فرانزک لیب کو ڈی این اے کا نمونہ بھیجا جس کے نتیجے کے مطابق احمد مجتبیٰ کا ڈی این اے چھیپا کے پاس رکھی گئی لاش نمبر112 سے میچ ہوا تھا مگر لاش نمبر 112 کا ڈی این اے کسی عبد القیوم نامی مسافر سے میچ ہوا تھا جس کی لاہور میں تدفین بھی کر دی گئی ہے۔ عبدالقیوم نامی مسافر کا ڈی این اے کراچی سے کرایا گیا تھا۔

کراچی طیارہ حادثہ: لاش نمبر 112 کا معمہ حل نہ ہو سکا

کراچی طیارہ حادثہ: لاش نمبر 112 کا معمہ حل نہ ہو سکاحادثے میں ہلاک ہونے والے کراچی کے احمد مجتبیٰ کے والد کا ڈی این اے سیمپل چھیپا سرد خانے میں موجود لاش نمبر 112 سے میچ کر گیا، لیکن یہ لاش پہلے ہی لاہور میں دفنائی جا چکی ہے۔مکمل خبر پڑھنے کے لیے: www.independenturdu.com/node/37971

Posted by Independent Urdu on Friday, June 5, 2020

احمد مجتبیٰ کی اہلیہ فضہ خان کا کہنا ہے کہ ان کو یقین ہے کہ جو لاشیں ابھی شناخت نہیں ہوئیں احمد مجتبیٰ کی لاش ان میں نہیں ہے مگر اس کو غلطی سے کسی دوسرے فریق کو دے دیا گیا ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ ممکن ہے شروع میں جو لاشیں بغیر ڈی این اے کے ورثا کو دی گئیں ہیں احمد مجتبیٰ کی لاش بھی ان میں سے ہو، انہوں نے مزید بتایا کہ پی آئی اے کی مدد سے احمد مجتبیٰ کی آخری سی سی ٹی وی فوٹیج حاصل کی ہے مگر وہ یہ نہیں جانتیں کہ آخر اس لاپرواہی کیلئے وہ کس کو ذمہ دار ٹھہرائیں۔

لاپتہ احمد مجتبیٰ کی بیوی نے کہا ہے کہ وہ صرف یہ چاہتی ہیں کہ اگر کسی نے ان کی لاش کو غلطی سے لے کر دفنا بھی دیا ہے تو کم از کم ان کو یہ بتا دیا جائے کہ قبر کس جگہ پر موجود ہے تاکہ وہ اس قبر پر جا کر فاتحہ خوانی کر سکیں۔

OR comment as anonymous below

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


24 گھنٹوں کے دوران 🔥

View More

From Our Blogs in last 24 hours 🔥

View More