سروسز ہسپتال میں آتشزدگی کے معاملے کو کرونا وائرس سے جوڑنے کی کوشش

 سروسز ہسپتال میں آتشزدگی کے معاملے کو کرونا وائرس سے جوڑنے کی کوشش ناکام

تفصیلات کے مطابق پاکستان تحریک انصاف کی حکومت اور وزیراعلی پنجاب سردار عثمان بزدار کے نقاد کچھ شرپسند عناصر کی جانب سے سوشل میڈیا پر سروسز ہسپتال میں آتشزدگی کے بعد مریضوں کو باہر نکالنے کی ویڈیو کو جواز بنا کر پنجاب حکومت کو بدنام کرنے کی ناکام کوشش کی جا رہی ہے۔

سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر گزشتہ روز سروسز ہسپتال کے آپریشن تھیٹر میں لگنے والی آگ کے باعث تمام مریضوں کو محفوظ رکھنے کے لئے ہسپتال کی انتظامیہ کی جانب سے آپریشن تھیٹر اور ایمرجنسی وارڈ سے مریضوں کو ان کے بیڈ سمیت باہر نکالا گیا، جس کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی ہے، جسے کچھ لوگ کرونا وائرس کے مریض بتا کر لوگوں کو گمراہ کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

سروسز ہسپتال میں آتشزدگی کے بعد بننے والی ویڈیو کو کرونا وائرس کے مریضوں کا رنگ دیتے ہوئے پاکستان کی صحافتی دنیا کے نامور صحافی عامر متین کا سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر ٹویٹ کرتے ہوئے لکھا تھا کہ ” ‏خدا کے لیے احتیاط کیجیے اور بچ جایئں ہسپتال جانے سے”۔

 

سروسز ہسپتال میں آتشزدگی کے باعث لگنے والی آگ سے مریضوں کو محفوظ کرنے کے لئے باہر نکالے جانے کی ویڈیو کو کرونا وائرس کے مریضوں کی بے تحاشا تعداد بتانے والوں کی غلط فہمی کو دور کرنے کے لئے وزیر اعلی پنجاب کے ڈیجیٹل میڈیا ونگ کے فوکل پرسن اظہر مشوانی کا اپنے ٹوئٹر پیغام میں لکھنا تھا کہ ” یہ آپریشن تھیٹر میں لگنے والی آگ کا معاملہ ہے، اور یہ مریض کرونا وائرس کے نہیں ہیں بلکہ ان سب کو آگ سے محفوظ رکھنے کے لیے باہر نکالا گیا ہے”۔

 

واضح رہے کہ گزشتہ روز سروسز ہسپتال لاہور کے ایمرجنسی وارڈ کے آپریشن تھیٹر میں شارٹ سرکٹ کے باعث آگ بھڑک اٹھی تھی، جس کے فورا بعد ہسپتال کی انتظامیہ اور ڈاکٹرز نے مریضوں کو بمشکل باہر نکالا، لیکن بھگدڑ مچنے کی وجہ سے دو ڈاکٹر زخمی ہوگئے تھے۔

OR comment as anonymous below

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


24 گھنٹوں کے دوران 🔥

View More

From Our Blogs in last 24 hours 🔥

View More