گزشتہ ضمانت کے مچلکے جمع نہ کرانے کے باوجود شہبازشریف کو دوبارہ ضمانت مل گئی

شہباز شریف کو گزشتہ ضمانت کے مچلکے جمع نہ کرانے کے باوجود دوبارہ ضمانت مل گئی۔

لاہور ہائی کورٹ میں شہباز شریف کی عبوری ضمانت کی درخواست کی سماعت جسٹس سردار احمد نعیم کی سربراہی میں 2 رکنی بینچ نے کی۔

شہباز شریف نے درخواست میں مؤقف اختیار کیا کہ ڈاکٹروں نے انہیں مزید 3 ہفتے آرام کا مشورہ دیا ہے، اس لیے ان کی عبوری ضمانت میں 3 ہفتے توسیع کی جائے اور ضمانتی مچلکوں پر دستخط کرنے کے لیے مزید مہلت دی جائے۔

عدالت کے استفسار پر وکیل شہباز شریف کا کہنا تھا کہ ان کے مؤکل کورونا کی وجہ سے آئسولیشن میں ہیں اور کیونکہ وہ کینسر کے مریض ہیں اس لیے ان کی ریکوری آہستہ ہوتی ہے، 14دن گزرنے کے باوجود شہباز شریف کو کورونا کی علامات ہیں۔

عدالت نے سوال کیا کہ ضمانت منظور ہونے کے بعد7 دن تھےان7 دنوں میں مچلکوں پر دستخط کیوں نہیں کرائے۔

وکیل کا کہنا تھا کہ شہباز شریف نے دستخط کرنے لاہور ہائی کورٹ آنا تھا لیکن ان کا کورونا ٹیسٹ مثبت آگیا، ان کی میڈیکل رپورٹس کو بھی ریکارڈ کا حصہ بنایا گیا ہے۔

عدالت نے سوال کیا کہ جب شہباز شریف نے ٹیسٹ ہی نہیں کرایا تو کیسے کہہ سکتے ہیں کہ کرونا کے مریض ہیں؟

وکیل کا مزید کہنا تھا کہ 9 جون کو نیب نے شہباز شریف کو بلایا اور شہباز شریف پیش ہوئے تھے، ایک سال 2 ماہ ہو گئے ہیں لیکن نیب منی لانڈرنگ کا ریفرنس دائر نہیں کر رہا۔

عدالت نے ضمانتی مچلکے جمع کرانے کی تاریخ میں بھی 7 جولائی تک توسیع کر دی۔

OR comment as anonymous below

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


24 گھنٹوں کے دوران 🔥

View More

From Our Blogs in last 24 hours 🔥

View More