برلن میں بچی اغوا کرنے والا شخص رنگے ہاتھوں پکڑا گیا

 

برلن کے پارک سے دوسالہ بچی کے اغوا کی کوشش ناکام بنادی گئی۔ خاتون نے کیمرے میں اغوا کار کی مشکوک سرگرمیاں دیکھیں تو اس کا پیچھا کیا اور اسے رنگے ہاتھوں پکڑ لیا۔

ہوا کچھ یوں کے جرمنی کے دارالحکومت برلن کے پارک سے ایک 44 سالہ شخص بچی کو  دور لے گیا جب اس کی والدہ گفتگو میں مشغول تھی۔ اغوا کار بچی کو کاندھے پر اٹھا کر لے گیا لیکن خاتون کی آنکھوں سے نہ بچ سکا۔

27 سالہ خاتون اپنی دو سالہ بیٹی لے کر جارہی تھی ، اس نے مشتبہ شخص کا تعاقب کیا اورایک آپریٹر کی مدد  سے اس تک پہنچ گئی۔ خاتون نے  اس سے پوچھا کہ کیا وہ اس کا بچہ ہے؟ اس شخص نے انکار کردیا اور کہا کہ وہ بچوں سے محبت کرتا ہے۔ بعد میں انہوں نے اسے زبردستی اس جگہ پر واپس جانے پر مجبور کیا جہاں ماں اپنی بچی کو تلاش کر رہی تھی۔

اغوا کار کو الزامات کے تحت گرفتار کرلیا گیا،لیکن بعد میں یہ کہہ کررہا کردیا گیا کہ  گرفتاری کے وارنٹ جاری کرنے کی شرائط پوری نہیں کی گئیں۔

پولیس نے ان کی رہائی کے بعد ٹویٹر پر ایک پوسٹ میں والدین کو راضی کرنے کی کوشش کی اور کہا کہ ابھی تک اس معاملے میں جنسی محرکات یا بدنیتی کا کوئی ثبوت نہیں ملا ہے اور برلن میں کھیل کے میدان کا دورہ کرنا معمول سے زیادہ خطرناک نہیں ہے۔ والدین نے بچی کو چھینتے ہوئے رنگے ہاتھوں پکڑے گئے شخص کی رہائی پر اپنی تشویش کا اظہار کیا ہے۔

OR comment as anonymous below

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


24 گھنٹوں کے دوران 🔥

View More

From Our Blogs in last 24 hours 🔥

View More