پاکستان کو گرے لسٹ میں رکھنے کا حالیہ اجلاس میں کوئی ذکر نہیں ہوا،ایف اے ٹی ایف

پاکستان کو گرے لسٹ میں رکھنے کا حالیہ اجلاس میں کوئی ذکر نہیں ہوا،ایف اے ٹی ایف

بھارتی میڈیا کا ایک اور جھوٹ بے نقاب، پاکستان کو گرے لسٹ میں رکھنے کا حالیہ اجلاس میں کوئی ذکر نہیں ہوا، ایف اے ٹی ایف

بھارتی میڈیا کی طرف سے پاکستان کے خلاف جھوٹا پروپیگنڈا کیا جارہا تھا کہ ایف اے ٹی ایف کے ہونے والے حالیہ ورچوئل اجلاس میں پاکستان کو گرے لسٹ میں رکھنے کا فیصلہ کیا گیا ہے جسے ایف اے ٹی ایف نے 24 جون کے ہونے والے اجلاس کے حوالے سے معلومات جاری کرتے ہوئے بے نقاب کر دیا ہے۔

فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کے جاری کیے گئے تازہ بیان کے مطابق ایف اے ٹی ایف نے 24 جون کو ہونے والے اجلاس میں صرف دو ممالک کی کارکردگی کا جائزہ لیا ہے جب کہ اس اجلاس میں پاکستان کا ذکر تک نہیں کیا گیا، ایف اے ٹی ایف پہلے ہی اپریل میں پاکستان سمیت 16 ممالک کی جائزہ کارکردگی کو کرونا وائرس کی وجہ سے چار ماہ تک منسوخ کر چکا ہے۔

ایف اے ٹی ایف کی جانب سے جاری کی گئی پریس ریلیز میں کہا گیا ہے کہ گذشتہ 24 جون کو ہونے والے ورچوئل اجلاس میں منگولیا اور آئس لینڈ کی کارکردگی کا جائزہ لیا گیا ہے اور دونوں ممالک کی کارکردگی کا جائزہ ان کی ہی درخواست پر لیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ اس سے قبل کچھ بھارتی خبر رساں اداروں کی جانب سے یہ دعویٰ کیا گیا تھا کہ فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کے حالیہ ہونے والے اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ پاکستان گرے لسٹ میں رکھا جائے گا، اس کے علاوہ ٹائمز آف انڈیا اور معروف ہندی اخبار دی ہندو میں بھی یہ شائع کیا گیا تھا کہ ایف اے ٹی ایف نے پاکستان کو مزید کچھ عرصہ گرے لسٹ میں رکھنے کا فیصلہ کیا ہے۔

اسی طرح پچیس جون کو بھارتی دفتر خارجہ کے ترجمان انوراگ شریواستو کا ایک پریس کانفرنس میں پوچھے گئے سوال پر کہنا تھا کہ ایف اے ٹی ایف کا پاکستان کو گرے لسٹ میں رکھنے کا فیصلہ اصل میں بھارتی موقف کی جیت ہے جس سے عالمی سطح پر تسلیم کیا گیا ہے۔

OR comment as anonymous below

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


24 گھنٹوں کے دوران 🔥

View More

From Our Blogs in last 24 hours 🔥

View More