وزیر ہوا بازی غلام سرور خان کو عہدے سے ہٹانے کی درخواست مسترد

وفاقی وزیرِ ہوا بازی غلام سرور خان کو عہدے سے ہٹانے کیلئے اسلام آباد ہائیکورٹ میں درخواست دائر کی گئی تھی، جس پر اسلام آباد ہائیکورٹ نےمحفوظ کیا گیا فیصلہ سناتے ہوئے غلام سرور خان کو عہدے سے ہٹانے کے لیے دائر کی گئی درخواست کو مسترد کردیا۔

عدالت کا وفاقی وزیر برائے ہوا بازی غلام سرور خان کو عہدے سے ہٹانے کے لیے دائر کی گئی درخواست کو مسترد کرتے ہوئے کہنا تھا کہ وفاقی وزیر کے خلاف ایکشن لینے کا اختیار وزیر اعظم کا ہے، جس میں عدالت میں مداخلت نہیں کرسکتی۔

عدالت کی جانب سے آٹھ صفحات پر مشتمل فیصلہ اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے جاری کیا، جس میں عدالت نے وفاقی وزیر کو عہدے سے برطرف کرنے کی درخواست کو مسترد کردیا۔

عدالت کا اپنے فیصلے میں کہنا تھا کہ اگر وفاقی وزیر برائے ہوا بازی غلام سرور خان کی وجہ سے ملک کا تشخص خراب ہوا ہے تو ان کے خلاف ایکشن لینے کا اختیار صرف اور صرف وزیراعظم کا ہے، عدالت وفاقی وزیر کے خلاف احتساب کے آئینی طریقہ کار میں مداخلت نہیں کر سکتی۔

عدالت نے فیصلہ سنانے سے قبل  ایڈووکیٹ طارق کی جانب سے دائر کی گئی درخواست پر سماعت کرتے ہوئے فیصلہ محفوظ کیا تھا، ایڈووکیٹ طارق نے اپنی دائر کی گئی درخواست میں موقف اپنایا تھا کہ وفاقی وزیر نے 262 پائلٹ سے متعلق بیان میں غیر ذمہ داری کا مظاہرہ کیا ہے۔

ایڈووکیٹ طارق کا عدالت میں اپنے موقف میں کہنا تھا کہ وفاقی وزیر کے غیر ذمہ دارانہ بیان کی وجہ سے پی آئی اے کی یورپ کے لیے پروازوں پر چھ ماہ کی پابندی لگا دی گئی ہے، اگر وفاقی وزیر کو پائلٹس کی ڈگریوں کے جعلی ہونے کا شبہ تھا تو ان کو چاہیے تھا کہ وہ خفیہ طور پر کارروائی کرتے اور معاملے کو خفیہ طور پر ہی حل کر لیتے۔

  • A judge is implying that telling truth is wrong? Kounsi saa’akhath ? almost every other year one plane goes down ? Nothing wrong to tell people truth and of course it is bitter. PIA as whole institute needs to overhaul.


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >