عزیر بلوچ کیس:نااہلی کی انتہا،سندھ حکومت کا ایک اور کارنامہ سامنے آ گیا

عزیر بلوچ کیس:نااہلی کی انتہا،سندھ حکومت کا ایک اور کارنامہ سامنے آ گیا

ویسے تو اپوزیشن ہمیشہ ہی حکومت پر تنقید کرتی آئی ہے وہ حکومت وفاقی ہو یا صوبائی مگر اب تو ایسے ایسے حقائق سامنے آ رہے ہیں کہ سن کر حیرانی الگ اور پریشانی الگ ہونے لگتی ہے۔

کیونکہ یہ تنقید اپوزیشن نہیں بلکہ سماجی حلقے کر رہے ہیں کہ سندھ حکومت نے ایسا کیوں کیا؟

لیاری گینگ وار کے مرکزی کردار عزیر بلوچ کے معاملے پر بنی جے آئی ٹی کی رپورٹ میں انکشاف ہوا ہے کہ عزیر بلوچ نے 196افراد کے قتل کا اعتراف کرلیا ہے۔

عزیر بلوچ سے تحقیقات کیلئے قائم کی گئی جوائنٹ انویسٹی گیشن ٹیم(جے آئی ٹی) نے تحقیقات مکمل کرکے رپورٹ مرتب کرلی ہے، رپورٹ کے مطابق عزیر بلوچ نے کراچی میں بڑے پیمانے پر قتل و دیگر جرائم کا اعتراف کیا ہے۔

36 صفحات پر مشتمل جے آئی ٹی رپورٹ کے مطابق عزیر بلوچ نے اپنے 20 قریبی دوستوں، 16 رکنی سٹاف اور خاندان کے افراد سے متعلق تفصیلات بھی جے آئی ٹی کے سامنے رکھیں، ملزم نے اعتراف کیا کہ جن افراد کو اس نے قتل کیا ان میں متعدد پولیس اور رینجرز کے اہلکار بھی تھے، یہ تمام قتل لسانی یا سیاسی بنیادوں پر کیے گئے۔

جے آئی ٹی رپورٹ کے مطابق لیاری گینگ وار کے مرکزی ملزم عزیر بلوچ کچھ عرصے کیلئے بیرون ملک فرار بھی رہا تھا لیکن اس دوران بھی ماہانہ لاکھوں روپے کا بھتہ کراچی سے دوبئی بھجوایا جاتا تھا، اس پیسے سے نہ صرف پاکستان اور دوبئی میں غیر قانونی طور پر اثاثے بھی بنائے گئے بلکہ 2008 سے 2013 کے دوران اسی پیسے سے مختلف ہتھیار بھی خریدے گئے۔
یہ جے آئی ٹی رپورٹ ایک نجی خبررساں ادارے نے حاصل کرکے رپورٹ کی ہے، سندھ حکومت کی جانب سے یہ رپورٹ آج عوام کے سامنے پیش کی جانی تھی۔

ایسے نامور اور مطلوب ملزم کو سندھ حکومت نے2012 میں صوبائی سطح پر امن ایوارڈ سے نوازا اس کے علاوہ یکم مارچ 2013 کو سندھ حکومت نے لیاری میں بننے والے گرلز ڈگری کالج کی تعمیر میں تعاون پر بھی سردار عزیر خان بلوچ کو ایوارڈ دیا۔

ایک طرف تو لیاری گینگ وار کے ملزم عزیر بلوچ کی قاتلانہ وارداتیں اور انکشافات سب کے سامنے ہیں جبکہ دوسری جانب سندھ حکومت کے کارنامے بھی کھل کھل کر سامنے آ رہے ہیں۔

  • Uzair Balcoh was protected by Zulfiqar Mirza and Fahmida Mirza who both are now in PTI’s government. No doubt PPP is corrupt and killers but I don’t get how come IK and his PTI ministers didn’t know the background and link between Uzair Baloch and Zulfiqar Mirza.

    Because both are morally and ethically corrupt.


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >