نوازشریف کی العزیزیہ ریفرنس میں ملنے والی سزا کے خلاف درخواست دائر کرنے کی تیاری

نوازشریف کی العزیزیہ ریفرنس میں ملنے والی سزا کے خلاف درخواست دائر کرنے کی تیاری

سابق وزیراعظم نوازشریف کو اسلام آباد کی احتساب عدالت کی جانب سے العزیزیہ ریفرنس میں7 سال قید کی سزا اور 1.5ارب روپے جرمانے کی سزا سنائی گئی تھی۔ جبکہ فلیگ شپ ریفرنس میں ان کو بری کر دیا گیا تھا۔

اب چونکہ مس کنڈکٹ ثابت ہونے پر نوازشریف کو سزا دینے والے جج ارشد ملک کو نوکری سے برطرف کر دیا گیا ہے۔ لہٰذا نواز شریف کی ہدایت پر ان کے وکیل خواجہ حارث نے اس سزا کے خلاف درخواست دائر کرنے کی تیاری کر لی ہے۔

اطلاعات کے مطابق خواجہ حارث کی جانب سے آج یہ درخواست دائر کی جانی تھی جوکہ ابھی تک دائر نہیں کی جا سکی۔ امکانات ہیں کہ درخواست کی مکمل تیاری کے بعد آئندہ چند روز میں اسلام آباد ہائی کورٹ میں دائر کی جائے گی۔

درخواست میں موقف اپنایا جائے گا کہ آئین کے مطابق اگر کسی جج پر بدعنوانی ثابت ہو جائے تو اس کے کیے گئے فیصلوں اور سزاؤں کی کوئی حیثیت نہیں رہتی۔

یاد رہے کہ اسلام آباد ہائیکورٹ میں پہلے سے ہی نوازشریف کی سزا کے خلاف ایک اپیل زیر سماعت ہے۔

خواجہ حارث اس درخواست میں موقف اپنائیں گے کہ کیونکہ احتساب عدالت کے سابق جج ارشد ملک کو برطرف کر دیا گیا ہے لہٰذا اب اس سزا کو بھی کالعدم قرار دیا جائے۔

  • کوئی فائز  عیسیٰ کوئی اطہر من الله کوئی باقر کوئی لوہار کورٹ کے جج نما …. کوئی ملک قیوم کوئی کا نا دجال ؟ زہر ہے کسی بھی حرام خور چور فراڈیا جج نما …. کے علاوہ کوئی صورت نہیں  


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >