پرانی کہانیاں بار بار دکھانے پر ڈرامہ انڈسٹری کو پھانسی دے دینی چاہیے: نعمان اعجاز

مشہور پاکستانی اداکار نعمان اعجاز نے انسٹاگرام کے لائیوسیشن کے دوران کہا کہ اصل ڈرامے ختم ہوگئے ہیں، انڈسٹری کو جاگنے کی ضرورت ہے، یہاں ہم کسی بھی ایک چینل کوذمہ دار نہیں ٹھہراسکتے، ہم جتنی منفی چیزیں اپنی عوام کو دکھائیں گے وہ اپنی زندگیوں میں وہی کریں گے۔

نعمان اعجاز نے کہا کہ میری ذاتی رائے ہے کہ ہماری ڈرامہ انڈسٹری کو پھانسی دے دینی چاہیئے کیونکہ آج کے ڈرامے کسی کو نہ ہی کوئی آگاہی دے رہے ہیں اورنہ ہی کوئی نئی معلومات، ایسا تصور کیا جاتا ہے عوام کچھ نہیں جانتی جب کہ اب عوام سب کچھ جانتی ہے اور ڈرامہ انڈسٹری ایک جگہ پر رک گئی ہے۔

نعمان اعجاز نے بات کرتے ہوئے غصے کا اظہارکرتے ہوئے کہا کہ آج کے ڈراموں میں یہ دکھایا جارہا ہے ایک خاتون کسی اور کے شوہر کو پسند کرتی ہے لیکن شادی کسی اور سے کر لیتی ہے۔ نہ صرف یہ بلکہ ایک دوسرے سے یا ایک دوسرے کے لیے بدلہ لیتے دیکھ کر ہی ڈراموں کا اختتام ہو جاتا ہے۔

اداکار نے ڈرامہ نشر کرنے والے نجی ٹی وی چینلز سے متعلق کہا کہ سب ہی چینلزایک طرح کے ڈرامہ دکھارہے ہیں ۔ جب کہ پہلے کے ڈراموں میں چاروں صوبوں کی ثقافت، روایتوں، رسم و رواج کو عکس بند کیا جاتا تھا جبکہ ان ڈراموں کے دیکھ کر بہت سی نئی معلومات بھی حاصل ہوا کرتی تھیں۔

  • pakista ka drama mid 90’s se qharq hogaya tha….

    ab tou sirf janaza baqi hai…. Story writing aik skill hai. Pakistani ‘writers’ k pass woh skill nahin … saaray hii 2 /3 bollhywood ya hollywood filmon ka murabba banaty hain

    And please ask Humayun saeed and adnan sidiqui to learn basics of acting

  • im totally agree with nouman ijaz. He’s the most favourite actor & the points he indicated are very good. Now a days we can’t see pakistani drama with our children, or parents. That’s why watching ertughril.  


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >