قومی اسمبلی اجلاس :پیپلزپارٹی کی خاتون ایم این اے نے مراد سعید کو مائیک دے مارا

قومی اسمبلی اجلاس کے دوران پیپلزپارٹی کی خاتون ایم این اے نے مائیک مراد سعید کو دے مارا

دنیا کی بڑی بڑی مہذب اقوام کی پارلیمان میں عجیب و غریب واقعات دیکھنے میں آتے ہیں جب معزز ارکان پارلیمنٹ کسی بھی موضوع پر بحث کرتے کرتے تکرار میں اتنے آگے نکل جاتے ہیں کہ معاملہ ہاتھا پائی تک پہنچ جاتا ہے۔

ہمارے ملک کی پارلیمنٹ میں بھی کئی بار ایسے واقعات سامنے آتے ہیں مگر آج ہونے والے قومی اسمبلی کے اجلاس میں خاتون ایم این اے نے اختلاف رائے کا نیا طریقہ نکالا ہے کہ جس میں معزز رکن اسمبلی نے پارلیمنٹ کی سیٹ پر موجود مائیک ہی اٹھا کر وفاقی وزیر کو دے مارا ہے۔

قومی اسمبلی اجلاس کے دوران وفاقی وزیر مراد سعید لیاری گینگ وار کے مرکزی ملزم عزیر بلوچ کا جے آئی ٹی میں ریکارڈ کرایا گیا 164 کا بیان پڑھ کر سنا رہے تھے جس میں ملزم عزیر بلوچ نے متعدد غیر قانونی کام پیپلزپارٹی کی قیادت کے کہنے پر کرنے کا اعتراف کیا ہے۔

وفاقی وزیر نے ایک شعر بھی پڑھ کر سنایا کہ

یہ دہشت گرد یونہی روز آکر نہیں پھٹتے
اسمبلی اوروزارت میں سہولتکاربیٹھےتھے

یہ بیان شروع ہونے کی دیر تھی کے پیپلزپارٹی کے ارکان نے اسمبلی سے واک آؤٹ کر دیا جس کے بعد اپوزیشن کی ایم این اے شاہدہ رحمانی نے کورم کی نشاندہی کر دی جس کے بعد کورم کی گنتی شروع کر دی گئی۔

اسی گنتی کے دوران پیپلزپارٹی کی ایک خاتون ایم این اے نے مائیک اور اس کی تار اکٹھی کرکے مراد سعید پر پھینک دی۔

اس دوران ڈپٹی اسپیکر اپوزیشن ارکان کو نعرے بازی سے روکتے رہے اور ارکان اور اپنی سیٹوں پر بیٹھنے کی ہدایت دیتے رہے۔

گنتی کے بعد کورم نا مکمل نکلا جس پر ڈپٹی سپیکر نے کورم پورا ہونے تک اجلاس ملتوی کر دیا۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >